کیا سوچتے ہو ، پھولوں کی رُت بیت گئی، رُت بیت گئی​| مجید امجد|

کیا سوچتے ہو ، پھولوں کی رُت بیت گئی، رُت بیت گئی​| مجید امجد|
کیا سوچتے ہو ، پھولوں کی رُت بیت گئی، رُت بیت گئی​| مجید امجد|

  

کیا سوچتے ہو ، پھولوں کی رُت بیت گئی، رُت بیت گئی​

وہ رات گئی، وہ بات گئی، وہ ریت گئی، رُت بیت گئی​

اک لہر اٹھی اور ڈوب گئے ہونٹوں کے کنول، آنکھوں کے دیِے​

اک گونجتی آندھی وقت کی بازی جیت گئی، رُت بیت گئی​

تم آگئے میری باہوں میں، کونین کی پینگیں جھول گئیں​

تم بھول گئے، جینے کی جگت سے ریت گئی، رُت بیت گئی​

پھر تیر کے میرے اشکوں میں گلپوش زمانے لوٹ چلے​

پھر چھیڑ کے دل میں ٹیسوں کے سنگیت گئی، رُت بیت گئی​

اک دھیان کے پاؤں ڈول گئے، اک سوچ نے بڑھ کر تھام لیا​

اک آس ہنسی، اک یاد سنا کر گیت گئی، رُت بیت گئی​

یہ لالہ و گل کیا پوچھتے ہو، سب لطفِ نظر کا قصّہ ہے​

رُت بیت گئی جب دل سے کسی کی پیت گئی، رُت بیت گئی​

شاعر: مجید امجد​

(شعری مجموعہ:شبِ رفتہ؛سالِ اشاعت،1958)

Kaya    Sochtay   Ho    Phoolon   Ki    Rut   Beet   Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Wo   Raat    Gai , Wo    Baat   Gai , Wo  Reet   Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Ik    Lehr    Uthi   Aor    Doob   Gaey   Honton   K   Kaqnwal   ,   Aankhon   K   Diay

Ik   Goonjti   Aandhi   Waqt   Ki   Baazi   Jeet   Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Tum   Aa   Gaey   Meri   Baahon   Men   ,   Konain   Ki   Peenghen   Jhool   Gai

Tum   Bhool   Gaey   Jeenay    Ki   Jagat   Say   Reet    Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Phir    Tair   Gaey   Meray   Ashkon   Men   Gulposh   Zamaanay   Laot   Chalay

Phir    Chhairr   K    Dil   Men   Teeson   K   Sangeet   Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Ik   Dhayaan   K   Paaon   Dol    Gaey , Ik   Soch   Nay    Barrh   Kar   Thaam   Liya

Ik   Aas   Hansi  ,   Ik    Yaad    Suna   Kar   Geet    Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Yeh    Laala -o-Gull    Kaya   Poochhtay    Ho   ,   Sab    Lutf-e-Nazar   Ka   Qissa   Hay

Rut   Beet    Gai   ,   Jab   Dil  Say    Kisi   Ki    Peet   Gai  ,   Rut   Beet   Gai

Poet: Majeed   Amjad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -