مہکتے ، میٹھے ، مستانے زمانے| مجید امجد|

مہکتے ، میٹھے ، مستانے زمانے| مجید امجد|
مہکتے ، میٹھے ، مستانے زمانے| مجید امجد|

  

مہکتے ، میٹھے ، مستانے زمانے

کب آئیں گے وہ من مانے زمانے

جو میرے کنجِ دل میں گونجتے ہیں

نہیں دیکھے وہ دنیا نے زمانے

تری پلکوں کی جنبش سے جو ٹپکا

اسی اک پل کے افسانے زمانے

تری سانسوں کی سوغاتیں ، بہاریں

تری نظروں کے نذرانے ، زمانے

کبھی تو میری دنیا سے بھی گزرو

لیے آنکھوں میں اَن جانے زمانے

انہی کی زندگی جو چل پڑے ہیں

تری موجوں سے ٹکرانے ، زمانے

میں فکرِ رازِ ہستی کا پرستار

مری تسبیح کے دانے زمانے

شاعر: مجید امجد

(شعری مجموعہ:شبِ رفتہ؛سالِ اشاعت،1958)

Mahaktay   ,   Meethay   ,   Mastaanay   ,    Zamaanay

Kab   Aaen   Gay   Wo   Man   Maanay   Zamaanay

Jo   Meray   Kunj-e-Dil   Men   Goonjtay   Hen

Nahen   Dekhay   Wo   Dunya   Nay    Zamaanay

Tiri   Palkon   Ki   Junbish   Say   Jo   Lapka

Usi   Ik   Pal   I k    Afsaanay   ,   Zamaanay

Tiri   Saanson   Ki   Sogaaten   ,   Bahaaren

Tiri   Nazron   K   Nazraanay   ,   Zamaanay

Kabhi   To   Meri   Dunya   Say   Bhi   Guzro

Liay   Aankhon   Men   An   Jaanay   ,   Zamaanay

Inhi   Ki   Zindagi   Jo   Chall   Parray  Hen

Tiri   Maojon   Say   Takraanay   ,   Zamaanay

Main    Fikr-e-Raaz-e-Hasti   Ka   Paristaar

Miri   Tasbeeh   K   Daanay   ,   Zamaanay

Poet: Majeed   Amjad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -