کب تک گزری باتیں یاد کریں، پچھتائیں| مجید امجد|

کب تک گزری باتیں یاد کریں، پچھتائیں| مجید امجد|
کب تک گزری باتیں یاد کریں، پچھتائیں| مجید امجد|

  

کب تک گزری باتیں یاد کریں، پچھتائیں

آؤ، آج ان مست ہواؤں میں بہہ جائیں

ٹوٹے پیمانوں کی ٹھیکریوں کے سفینے

بیتے سمے یادوں کی رو میں بہتے جائیں

کِس کو بتائیں اب یہ جو الجھن آن پڑی ہے

جب تک تم کو بھول نہ پائیں، یاد نہ آئیں

اکثر اکثر دوری سمٹی، رستے پھیلے

منزل! تیرا قربِ گریزاں، کیا بتلائیں

ان سنگین حصاروں میں دل کا یہ جھروکا

گونجیں جس میں ٹھٹکتے قدموں کی پرچھائیں

شاعر: مجید امجد

(شعری مجموعہ:شبِ رفتہ؛سالِ اشاعت،1958)

Kab   Tak   Guzri   Baaten   Yaad    Karen   ,  Pachhtaaen

Aao   ,   Aaj   In   Mast   Hawaaon   Men   Beh   Jaaen

Tootay   Paimaanon   Ki    Thheekron   K   Safeenay

Beetay   Samay   , Yaadon   Ki   Rao   Men   Behtay   Jaaen

Kiss   Ko   Bataaen   Ab   Jo   Yeh   Uljhan   Aan   Parri   Hay

Jab   Tak   Tum   Ko   Bhool   Na   Jaaen   ,   Yaad   Na   Aaen

Aksar    Aksar    Doori   Simti   ,   Rstay   Phailay

Manzill !   Tera   Qurb-e-Gurezaan   Kaya   Batlaaen

In   Sangeen   Hassaaron   Men   Dil   Ka   Yeh    Jahroka

Goojen   Jiss   Men   Thithaktay   Qadmon   Ki   Parchhaaen

Poet: Majeed    Amjad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -