یوں بھی خزاں کا رُوپ سہانا لگا مجھے| محسن نقوی |

یوں بھی خزاں کا رُوپ سہانا لگا مجھے| محسن نقوی |
یوں بھی خزاں کا رُوپ سہانا لگا مجھے| محسن نقوی |

  

یوں بھی خزاں کا رُوپ سہانا لگا مجھے

ہر پھول فصلِ گل میں پرانا لگا مجھے

میں کیا کسی پہ سنگ اُٹھانے کی سوچتا

اپنا ہی جسم آئینہ خانہ لگا مجھے

اے دوست! جھوٹ عام تھا دنیا میں اس قدر

تو نے بھی سچ کہا تو فسانہ لگا مجھے

اب اس کو کھو رہا ہوں بڑے اشتیاق سے

وہ جس کو ڈھونڈنے میں زمانہ لگا مجھے

محسنؔ ہجومِ یاس میں مرنے کا شوق بھی

جینے کا اِک حسین بہانہ لگا مجھے

شاعر: محسن نقوی

(شعری مجموعہ:بندِ قبا؛سالِ اشاعت،1984)

Yun   Bhi   Khizaan   Ka   Roop   Suhaana   Laga   Mujhay

Har   Phool   Fasl-e-Gull  Men   Puraana   Laga   Mujhay

Main   Kaya   Kis   Pe   Sang   Uthaanay   Ki   Sochta

Apna   Hi   Jism   Aaina   Khaana   Laga   Mujhay

Ay   Dost ! Jhoot   Aam   Tha   Dunya   Men   Iss   Qadar

Tu   Nay   Bhi   Sach   Kahaa  To   Fasaana   Laga   Mujhay

Ab   Uss   Ko   Kho   Raha   Hun   Barray   Ishtiyaaq   Say

Wo   Jiss   Ko   Dhoondnay   Men   Zamaana   Laga   Mujhay

MOHSIN   Hujoom-e-Yaas   Men   Marnay   Ka   Shoq   Bhi

Jeenay   Ka   Ik   Haseen   Bahaana   Laga   Mujhay

Poet: Mohsin   Naqvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -