میں چپ رہا کہ زہر یہی مجھ کو راس تھا| محسن نقوی |

میں چپ رہا کہ زہر یہی مجھ کو راس تھا| محسن نقوی |
میں چپ رہا کہ زہر یہی مجھ کو راس تھا| محسن نقوی |

  

میں چپ رہا کہ زہر یہی مجھ کو راس تھا

وہ سنگ لفظ پھینک کے کتنا اداس تھا

اکثر مری قبا پہ ہنسی آ گئی جسے

کل مل گیا تو وہ بھی دریدہ لباس تھا

میں ڈھونڈھتا تھا دور خلاؤں میں ایک جسم

چہروں کا اک ہجوم مرے آس پاس تھا

تم خوش تھے پتھروں کو خدا جان کے مگر

مجھ کو یقین ہے وہ تمہارا قیاس تھا

بخشا ہے جس نے روح کو زخموں کا پیرہن

محسنؔ وہ شخص کتنا طبیعت شناس تھا

شاعر: محسن نقوی

(شعری مجموعہ:بندِ قبا؛سالِ اشاعت،1984)

Main   Chup   Raha   Keh   Zehr   Yahi   Mujh   Ko   Raas   Tha

Wo   Sang   Lafz   Phaink   K   Kitna   Udaas   Tha

Aksar   Miri   Qabaa   Pe   Hansi    Aa   Gai   Jisay

Kall   Mil   Gaya   To   Wo   Bhi   Dareeda   Libaas   Tha

Main   Dhhondta   Tha   Door    Khalaaon   Men   Aik   Jism

Chehron   Ka   Ik   Hujoom   Miray   Aas   Paas   Tha

Tum   Khush   Thay   Patharon   Ko   Khuda   Jaan   K   Magar

Mujh   Ko   Yaqeen   Hay   Wo   Tumhaara   Qayaas   Tha

Bakhsha    Hay   Jiss   Nay   Rooh   Ko   Zakhmon   Ka   Pairhan

MOHSIN   Wo   Shakhs    Kitna  Tabeeat   Shanaas   Tha

Poet: Mohsin   Naqvi

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -