منسوب تھے جو لوگ مری زندگی کے ساتھ| محسن نقوی |

منسوب تھے جو لوگ مری زندگی کے ساتھ| محسن نقوی |
منسوب تھے جو لوگ مری زندگی کے ساتھ| محسن نقوی |

  

منسوب تھے جو لوگ مری زندگی کے ساتھ

اکثر وہی ملے ہیں بڑی بے رخی کے ساتھ

یوں تو میں ہنس پڑا ہوں تمہارئے لئے مگر

کتنے ستارے ٹوٹ پڑے اک ہنسی کے ساتھ

فرصت ملے تو اپنا گریباں بھی دیکھ لے

اے دوست یوں نہ کھیل مری بے بسی کے ساتھ

مجبوریوں کی بات چلی ہے تو مے کہاں

ہم نے پیا ہے زہر بھی اکثر خوشی کے ساتھ

چہرے بدل بدل کے مجھے مل رہے ہیں لوگ

اتنا برا سلوک مری سادگی کے ساتھ؟

اک سجدہ خلوص کی قیمت فضائے خلد؟

یا رب نہ کر مذاق مری بندگی کے ساتھ

محسن کرم کی لے بھی ہو جس میں خلوص بھی

مجھ کو غضب کا پیار ہے اس دشمنی کے ساتھ

شاعر: محسن نقوی

(شعری مجموعہ:بندِ قبا؛سالِ اشاعت،1984)

Mansoob   Thay   Jo   Log   Miri   Zindagi   K   Saath

Aksar   Wahi   Milay    Hen   Barri   Be Rukhi   K   Saath

Yun   To   Main   Hans   Parra  Hun   Tumhaaray   Liay   Magar

Kitnay   Sitaaray   Toot   Parray   Ik   Hansi   K   Saath

Fursat   Milay   To   Apna   Grebaan   Bhi   Dekh   Lay

Ay   Dost   Yun   Na   Khail   Miri   Be   Basi   K   Saath

Majbooriun   Ki   Baat   Chali   Hay   To   May   Kahan

Ham   Nay   Piya   Hay   Zehr   Bhi   Aksar   Khusi   K   Saath

Chehray   Badal   Badal   K   Mujhay   Mill   Rahay   Hen   Log

Inta   Bura   Sulook   Miri   Saadgi   K   Saath

Ik   Sajda -e-Khuloos   Ki   Qeemat   Faza-e-Khuld

YA RAB   Na   Kar   Mazaaq   Miri   Bandagi   K   Saath?

MOHSIN   Karam   Ki    Lay    Bhi   Ho   Jiss   Mem   Khuloos   Bhi

Mujh   Ko   Ghazab   Ka   Payaar   Hay   Iss   Dushmani   K   Saath

Poet: Mohsin   Naqvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -