کوفۂ شب نے جو تعبیر کی حد جاری کی | محسن چنگیزی |

کوفۂ شب نے جو تعبیر کی حد جاری کی | محسن چنگیزی |
کوفۂ شب نے جو تعبیر کی حد جاری کی | محسن چنگیزی |

  

کوفۂ شب نے جو تعبیر کی حد جاری کی 

میں نے جلتے ہوئے خوابوں کی عزا داری کی 

وقت نے اس کے مقدر میں لکھی تاریکی 

جس نے چڑھتے ہوئے سورج کی طرف داری کی 

دل دھڑکنے پہ مصر تھا سو دھڑکتا ہی گیا 

لمحۂ دید کی آنکھوں نے نگہ داری کی 

طاق ہر چشم پہ خوابوں کے دیے بجھ سے گئے 

کچھ ہوا ایسی چلی شہر میں بے داری کی 

سکھ کا کردار نبھانے کے لیے عمر تمام 

میں نے روتی ہوئی آنکھوں سے اداکاری کی 

شاعر: محسن چنگیزی

Koofa -e-Shab   Nay   Jo    Tabeer   Ki   Hadd   Jaari   Ki

Main   Nay   Jaltay   Huay    Khaabon   Ki   Azadaari   Ki

 Waqt   Nay   Uss   K   Muqddaar   Men   Likhi   Tareeki

Jiss   Nay   Charrhtay    Huay   Sooraj   Ki   Tarafdaari   Ki

Dil    Dharraknay    Pe    Musir   Tha   So   Dharrakta   Hi   Gaya

Lamha-e-Deed    Ki    Aankhon   Nay   Nigah    Daari   Ki

 

Taaq   Har   Chashm    Pe    Khaabon   K   Diay   Bujhtay   Hen

Kuchh    Hawaa    Aisi   Chali   Shehr   Men   Bedaari   Ki

 Sukh   Ka   Har   Kirdaar   Nibhaanay   K   Liay   Umr   Tamaam

Main   Nay   Roti   Hui   Aankhon   Say   Adakaari   Ki

Poet: Mohsin   Changezi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -