ترے فراق میں دل سے نکال کر دنیا| محسن چنگیزی |

ترے فراق میں دل سے نکال کر دنیا| محسن چنگیزی |
ترے فراق میں دل سے نکال کر دنیا| محسن چنگیزی |

  

ترے فراق میں دل سے نکال کر دنیا

چلا ہوں سکےّ کی مانند اچھال کر دنیا

بڑھا لیا ترے دامان کی طرف اک ھاتھ

اور ایک ھاتھ سے رکھی سنبھال کر دنیا

میں اپنے حجرے میں نان و نمک پہ قانع تھا

وہ چل دیا مری جھولی میں ڈال کر دنیا

میں برق پا ہوں ابھی تک سو راستہ دے مجھے

میں گِر پڑوں تو مجھے پائمال کر دنیا

تری ہتھیلی پہ تازہ ہے میرا خون ابھی

تو میری موت کا کچھ تو ملال کر دنیا

شاعر: محسن چنگیزی

Tiray   Firaaq   Men   Dil   Say   Nikaal    Kar   Dunya

Chalaa   Hun   Sikkay   Ki   Manind   Uchhaal   Kar   Dunya

Barrhaa   Liya   Tiray   Damaan   Ki   Taraf   Ik   Haath 

Aor   Aik   Haath   Say   Rakhi   Sanbhaal   Kar   Dunya

Main   Aik   Hujray   Men   Naan-o-Namak   Pe   Qaanay   Tha

Wo   Chall   Diya   Miri   Jholi   Men   Daal   Kar   Dunya

 Main   Barq   Pa    Hun   Abhi    Tak   So    Raasta   Day   Mujhay

Main   Gir   Parrun   To   Mujhay   Paaimaal   Kar   Dunya 

 

Tiri   Hathaili   Pe   Taaza   Hay   Mera    Khoon   Abhi 

Tu   Meri   Maot   Ka   Kuchh   To   Malaal   Kar   Dunya

 

Poet: Mohsin   Changezi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -