قیام میں بھی کسی راہ پر روانہ تھا| محسن چنگیزی |

قیام میں بھی کسی راہ پر روانہ تھا| محسن چنگیزی |
قیام میں بھی کسی راہ پر روانہ تھا| محسن چنگیزی |

  

قیام میں بھی کسی راہ پر روانہ تھا

مرا مزاج ازل سے مسافرانہ تھا

پڑا تھا اس کے بھی رُخ پر نقابِ ناموجود

مری بھی آنکھ پہ اک دستِ غائبانہ تھا

ہم اپنی روح ترے جسم ہی میں چھوڑ آئے

تجھے گلے سے لگانا تو اک بہانہ تھا

ترے حصول کی بازی بھی کتنی مشکل تھی

اِدھر میں یکہ و تنہا اُدھر زمانہ تھا

میں اُس کو دیکھتا رہتا تھا اس کی آنکھوں سے 

خیال و خواب کا موسم بڑا سہانا تھا 

شاعر: محسن چنگیزی

Qayaam   Men   Bhi   Kisi   Raah   Par   Rawaana   Tha

Mira   Mizaaj   Azal   Say   Musaafraana   Tha

Parra   Tah   Uss   K   Bhi   Rukh   Par   Naqaab-e-Na   Mojood

Miri   Bhi   Aankh   Pe   Ik   Dast-e-Ghaaibaana   Tha

 

 Ham   Apni   Rooh   Tiray   Jism   Hi   Men   Chorr   Aaey

Tujhay   Galay   Say   Lagaana   To   Ik   Bahaana   Tha

 Tiray   Husool   Ki   Baazi   Bhi   Kitnii   Mushkill   Hay

Idhar   Main   Yaka -o-Tanhaa  ,   Udhar   Zamaana   Tha

 Main   Uss   Ko   Dekhta   Rehta   Hun   Uss    Ki   Aankhon   Say

Khayaal-o-Khaab   Ka   Mosam   Baraa   Suhaana   Tha

Poet: Mohsin   Changezi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -