تو نے ہر شے کو تہہِ دام کیاہے ساقی| محمد عابد علی عابد |

تو نے ہر شے کو تہہِ دام کیاہے ساقی| محمد عابد علی عابد |
تو نے ہر شے کو تہہِ دام کیاہے ساقی| محمد عابد علی عابد |

  

تو نے ہر شے کو تہہِ دام کیاہے ساقی

قید زُلفوں میں تری موجِ ہوا ہے ساقی

کوئی تخصیص نہیں ، ایسا سنا ہے ساقی

درِ مے خانہ سب کے لیے وا ہے ساقی

مے کدے سے مرا کچھ بھی نہیں لینا دینا

مرا مقصد تری تسلیم و رضا ہے ساقی

تو ہی رہتاہے رگ و پے میں لہو کی صورت

تیرے بن مے کدۂ جاں میں خلا ہے ساقی

خاطرِ وصل سدا بحر کی آغوش ہے وا

اک پس و پیش میں قطرے کی انا ہے ساقی

شاعر: محمد عابد علی عابد

(شعری مجموعہ:شاہ پر؛سالِ اشاعت،2009)

Tu   Nay   Har   Shay   Ko   Tah-e-Daam   Kiya   Hay   Saaqi

Qsid    Zulfon   Men   Tiri   Moj-e-Hawaa   Hay   Saaqi

Koi    Takhsees   Nahen  ,   Aisa    Sunaa   Hay   Saaqi

Dar-e-Maikhaana   Sabhi   K   Liay   Khula   Hay   Saaqi

Maikaday   Say    Mira   Khuchh   Bhi   Nahen   Lena    Dena

Mira   Maqsad   Tiri   Tasleem -o-Raza   Hay   Saaqi

Tu   Hi    Rehta   Hay   Rag-o-Pay   Men   Lahu   Ki   Soorat

Teray   Bin   Maikadaa-e-Jaan   Men   Khalaa   Hay   Saaqi

Khhatir-e-Wasl   Sadaa   Behr   Ki    Aaghosh   Hay   Waa

Ik    Pas-o-Paish   Men    Qatray    Ki    Anaa   Hay   Saaqi

Poet: Muhammad   Abid   Ali   Abid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -