نئے امکان سے لبریز رہتا ہے ہمیشہ| محمد عابد علی عابد |

نئے امکان سے لبریز رہتا ہے ہمیشہ| محمد عابد علی عابد |
نئے امکان سے لبریز رہتا ہے ہمیشہ| محمد عابد علی عابد |

  

نئے امکان سے لبریز رہتا ہے ہمیشہ

بلندی پر دلِ نوخیز رہتا ہے ہمیشہ

جوار و قرب سے اپنے یہ رہتے ہیں گریزاں

گلوں کا خار سے پریز رہتا ہے ہمیشہ

تروتازہ سدا رہتے ہیں خدو خال ترے

ترا چہرا گلِ نوخیز رہتا ہے ہمیشہ

ہے جلدی وصل کی دریاکو بحرِ بیکراں سے

دہانے پر بہاؤ  تیز رہتا ہے ہمیشہ

الہیٰ حشر کا  تیرے یہاں بھی سامنا ہے

بپا دنیا میں رستا خیز رہتا ہے ہمیشہ

شاعر: محمد عابد علی عابد

(شعری مجموعہ:شاہ پر؛سالِ اشاعت،2009)

Naey   Imkaan   Say   Labraiz     Rehta    Hay   Hamesha

Bulandi    Par   Dil-e-Naokhaiz    Rehta    Hay   Hamesha

Jawaar-o-Qurb    Say   Apnay   Yeh    Rehtay   Hen   Gurezaan

Gulon   Ka   Khaar    Say   Parhaiz     Rehta    Hay   Hamesha

Tar-o-Taaza    Sadaa   Rehtay   Hen   Khad-o-Khaal   Tiray

Tera   Chehra   Gull-e-Naokhaiz    Rehta    Hay   Hamesha

Hay   Jaldi   Wasl   Ki   Darya   Ko   Behr-e-Bekaraan   Say

Dahaanay   Par   Bahaao   Taiz     Rehta    Hay   Hamesha

Elaahi    Hashr   Ka   Teray   Yahan   Bhi   Saamna   Hay

Bapaa   Dunya   Men   Rastaa   Khaiz    Rehta    Hay   Hamesha

Poet: Muhammad   Abid   Ali   Abid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -