تلاشِ منزلِ گمنام پہ لگا دیا ہے| محمد عابد علی عابد |

تلاشِ منزلِ گمنام پہ لگا دیا ہے| محمد عابد علی عابد |
تلاشِ منزلِ گمنام پہ لگا دیا ہے| محمد عابد علی عابد |

  

تلاشِ منزلِ گمنام پہ لگا دیا ہے

بشر کو کوششِ ناکام پہ لگا دیا ہے

پری جمال ہے وہ آسماں سے اُترے گا

نظر کو دل پہ نہیں بام پہ لگا دیا ہے

ہیں روزگار میں مصروف دست و پا بچا دل

اُسے پرستشِ اصنام پہ لگا دیا ہے

ہمیں شرف ہے یہ حاصل کہ چاکری کے لیے

خدا نے وعدۂ  انعام پہ لگا دیا ہے

ظروف چاک پہ رکھتے ہیں جیسے کوزہ گراں

ہمیں بھی گردشِ ایام پہ لگا دیا ہے

شاعر: محمد عابد علی عابد

Talaash-e-Manzil-e-Gumnaam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

Bashar   Ko   Koshish-e-Nakaam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

 Pari   Jamaal   Hay   Wo    Aasmaan   Say   Utray   Ga

Nazar   Ko   Dil   Pe   Nahen   Baam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

 Hen   Rozgaar   Men    Masroof   Dast-o-Paa   Bachaa   Dil

Usay   Parastish-e-Asnaam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

 Hamen   Sharaf   Hay   Yeh   Haasil   Keh   Chaakri   K   Liay

Khuda   Nay   Waada -e-Inaam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

 Zuroof    Chaak   Pe   Rakhtay   Hen   Jaisay   Kooza   Gar

Hamen   Bhi   Gardish-e-Ayyaam   Pe   Lagaa   Diya   Hay

 Poet: Muhammad   Abid   Ali   Abid

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -