878کلو میٹر طویل مٹیاری تا لاہور ٹرانسمیشن لائن کی تعمیر 2ماہ میں شروع ہوگی

878کلو میٹر طویل مٹیاری تا لاہور ٹرانسمیشن لائن کی تعمیر 2ماہ میں شروع ہوگی

لاہور(اے پی پی )چائنا پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) کے تحت 1.57 ارب ڈالر کی لاگت سے 878 کلومیٹر طویل مٹیاری تا لاہور ٹرانسمیشن لائن کی تعمیر اگلے دو ماہ میں شروع ہو جائے گی‘ 4000 میگا واٹ استعداد کی حامل 177660 کے وی ہائی وولٹیج ڈائریکٹ کرنٹ (ایچ وی ڈی سی) ٹرانسمیشن لائن زیر تعمیر کوئلے سے چلنے والے بجلی گھروں سے بجلی کی ترسیل کریگی‘ یہ منصوبہ دو سے اڑھائی سالوں میں مکمل ہو گا‘ این ٹی ڈی سی کے ترجمان نے اے پی پی کو بتایا کہ 177660 کے وی کی دو ٹرانسمشن لائنز مٹیاری۔ لاہور اور پورٹ قاسم۔ فیصل آباد اقتصادی راہداری کے تحت ترتیب دیئے گئے ہیں‘ اس سلسلے میں این ٹی ڈی سی اور سٹیٹ گرڈ کارپوریشن چائنا (ایس جی سی سی/ سی ای ٹی) کے مابین تعاون کا معاہدہ طے پا چکاہے اور یہ منصوبے حکومت پاکستان کی ٹرانسمیشن پالیسی 2015ء کے تحت دو مراحل میں’’بلڈ، اون آپریٹ اینڈ ٹرانسفر کی بنیاد پر دو مراحل میں مکمل کئے جائیں گے‘ تاہم پہلے مرحلے میں مٹیاری ۔لاہور ٹرانسمیشن لائن پر کام کیاجائیگا‘ اس منصوبے کے تحت 878 کلومیٹر طویل ٹرانسمیشن لائن بچھائی جائے گی جو 4000 میگا واٹ استعداد کی حامل ہو گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ منصوبے میں دو کنور ٹر اسٹیشن ‘دو اے سی سوئچنگ اسٹیشن شامل ہیں جو مٹیاری اور لاہور میں تعمیر کئے جائیں گے علاوہ ازیں دو الیکٹروڈ گراؤنڈنگ اسٹیشن بھی مٹیاری اور لاہور میں لگائے جائیں گے۔ ترجمان نے مزید بتایا کہ اس ٹرانسمیشن لائن کے ذریعے 4000 میگا واٹ بجلی 1320 میگا واٹ کے پورٹ قاسم کول پاور پراجیکٹ (کراچی)‘ 1320 میگا واٹ کے شنگھائی الیکٹرک (تھر) کول پاور پراجیکٹ‘ 660 میگا واٹ کے اینگرو تھرکول پراجیکٹ‘ 1320 میگا واٹ کے حبکو کول پاور پراجیکٹ (بلوچستان)سے بجلی کی ترسیل کی جائیگی۔ انہوں نے بتایا کہ لاہور کنورٹر اسٹیشن اور اس سے ملحقہ اے سی سوئچنگ اسٹیشن لاہور سے 60 کلومیٹر کے فاصلے پر بھائی پھیرو‘ موڑکھنڈا روڈ پر بلوکی سے 4 کلومیٹر مغر ب کی طرف تعمیر کیاجائیگا ۔

جبکہ مٹیاری کنورٹر اسٹیشن اور ملحقہ اے سی سوئچنگ سٹیشن نیشنل ہائی وے پر مٹیاری سے 8 کلومیٹر دور سیاخارت دیہات کے قریب تعمیر کیا جائیگا۔یاد رہے کہ حکومت کی بجلی کی پیداوار کی فاسٹ ٹریک پالیسی کے تحت جاری منصوبے پورٹ قاسم کول پراجیکٹ (کراچی) کا پہلا 660 میگا واٹ کا مرحلہ 2018ء جبکہ 660 میگا واٹ کادوسرا مرحلہ 2020ء میں مکمل ہو گا۔ اسی طرح 1320 میگا واٹ کے شنگھائی الیکٹرک (تھر) کول پراجیکٹ کا 660 میگا واٹ کا پہلا مرحلہ 2018ء جبکہ 660 میگا واٹ کادوسرا مرحلہ 2020ء میں مکمل ہو گا۔ 660 میگا کا اینگرو تھرکول پراجیکٹ 2019ء‘ 1320 میگا واٹ کا حبکو کول پاور پراجیکٹ بلوچستان 2020ء میں مکمل ہو جائیں گے۔

مزید : کامرس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...