عالمی یوم خواندگی کے موقع پر قائد اعظم لائبریری میں گول میزکانفرنس

عالمی یوم خواندگی کے موقع پر قائد اعظم لائبریری میں گول میزکانفرنس

لاہور(فلم رپورٹر)عالمی یوم خواندگی کے موقع پر قائد اعظم لائبریری میں گزشتہ روز ایک گول میزکانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس کے مہمان خصوصی مشیر وزیر اعلیٰ پنجاب برائے اتحاد بین المسلمین ڈاکٹر عبد الغفور راشد تھے۔کانفرنس کا مقصد عوام میں علم و آگہی کی اہمیت اور ضرورت پر زور دینا،دنیا بھر میں تعلیم کی اہمیت کو اجاگر کرنا اور خواندگی کی شرح کو بڑھانا تھا۔گول میز کانفرنس میں ڈی جی پبلک لائبریریز پنجاب ڈاکٹر ظہیر احمد بابر،ڈائریکٹر لائبریریزمحمد توفیق، سابق ڈائریکٹر پبلک انسٹرکشنزپنجاب محمد جمیل نجم، ڈائریکٹر پنجاب لائبریری فاؤنڈیشن رحمان آصف، سیکشن آفیسر سیکرٹریٹ ساجدہ نصرت،چیف لائبریرین ماڈل ٹاؤن لائبریری ملک عید محمد،چئیرمین انڈیس لٹریسی کونسل پروفیسر سجاد حیدر،سبجیکٹ سپیشلسٹ پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور ریاض فارسی اور قائداعظم لائبریری، پنجاب پبلک لائبریری اور ماڈل ٹاؤن لائبریری،ڈائرکٹریٹ لائبریری کے سٹاف سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی شخصیات کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے مشیر وزیر اعلیٰ پنجاب اتحاد بین المسلمین ڈاکٹرعبد الغفور راشدنے خواندگی کی شرح بڑھانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ تعلیم ہماری بنیادی ضرورت ہے، یہ ایک ایسی روشنی ہے جو اندھیروں سے نکلنا سکھاتی ہے۔یہ دور ڈائیلاگ اور دلیل کا دور ہے۔ ہمیں دلیل سے لوگوں کو قائل کرنا ہے گھائل نہیں۔ ہم کسی کو نقصان پہنچا کر عظمت حاصل نہیں کر سکتے بلکہ علم کی روشنی پھیلا کر خود کو عظیم بنا سکتے ہیں۔ساجدہ نصرت نے شرح خواندگی میں بہتری لانے کے حوالے سے کہا کہ ہمیں ملکی صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے پوری ایمانداری سے اس حوالے سے کام کرنا ہوگا تبھی آئندہ 30سالوں8 میں اپنے بچوں کو اعلیٰ تعلیم سے روشناس کروا سکتے ہیں۔ہم کہتے ہیں کہلاکھوں بچوں نے آج تک سکول کی شکل نہیں دیکھی تو اس کی وجہ ان کے معاشی حالات بہتر ہوگی تو ہی بچے سکولوں میں جائیں گے وگرنہ ورکشاپس پر کام کر کے دو وقت کی روٹی کمائیں گے۔اس کے لئے ہمیں اپنے سوشل سیٹ اپ میں تبدیلی لانے کی اشد ضرورت ہے۔کانفرنس کے اختتام پرڈاکٹر ظہیر احمد بابر نے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم کے بغیر دنیا کی کوئی بھی قوم ترقی نہیں کر سکتی، ترقی یافتہ قوموں8 کے پیچھے ان لوگوں کا ہاتھ ہے جو اعلیٰ تعلیم یافتہ اور قابل ہیں۔ یہ قومیں ہمارے قابل افرادکو ذرائع فراہم کر کے اپنی ترقی کے لئے استعمال کرتی ہیں لیکن ہماری سوچ اور عمل اس سے کوسوں دور ہے۔ترقی یافتہ قومیں ہر برس آئندہ ہزار سال کا منصوبہ بناتی ہیں اور یہی ان کی ترقی کا راز ہے۔محض تعلیم ہی ہے جو ہمیں جاہلیت کے اندھیروں سے نکال کر روشنی کی جانب لے جا سکتی ہے چنانچہ ہمیں اپنے پانچ قسم کے ایجوکیشن سسٹم کو ایک سسٹم بنا کراس میں بہتری لائی جاسکتی ہے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...