مقبوضہ کشمیر،بھارتی فوج کی فائرنگ سے مزید 7شہری شہید ،200زخمی ،20مظاہرین گرفتار

مقبوضہ کشمیر،بھارتی فوج کی فائرنگ سے مزید 7شہری شہید ،200زخمی ،20مظاہرین ...

سرینگر(اے این این) مقبوضہ کشمیر میں برہان وانی کی شہادت کے65روز بھی حالات معمول پر نہ آ سکے،تشدد اور ریاستی دہشتگردی کا سلسلہ جاری،بھارتی فوج کے ہاتھوں مزید سات کشمیری شہید،200سے زائد زخمی،20مظاہرین گرفتار کر لئے گئے جبکہ مجاہدین کے حملے میں دو بھارتی فوجی جہنم ہلاک، حریت قیادت کی کشمیری عوام سے عیدالاضحی سادگی سے منانے کی اپیل ۔جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلعے میں ایک ہند مخالف ریلی پر پولیس کے حملے میں تقریبا 80 افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں جبکہ تقریبا 20 مظاہرین کو پولیس نے حراست میں لے لیا ہے۔وادی میں تازہ کارروائی کے بعد اتوار کو ہونے والی ہلاکتوں کی تعداد7ہو گئی جبکہ200سے زائد مظاہرین کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں ۔ بھارت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی نے فوج کے حوالے سے بتایا ہے کہ انھوں نے کشمیر کے نوگام سیکٹر میں کنٹرول لائن کے قریب شدت پسندوں کی دراندازی کی کوشش کو ناکام بنا دیا ہے۔سرکاری ٹی وی چینل دور درشن کے مطابق پونچھ میں سکیورٹی فورسز اور شدت پسندوں کے درمیان تصادم آخری اطلاعات تک جاری تھا۔مجاہدین کے حملے میں ایک بھارتی فوجی موقع پر ہلاک جبکہ دوسرا زخمی ہو گیا تھا تاہم بعد میں وہ بھی ہسپتال میں دوم توڑ گیا۔ وادی میں کئی مقامات پر ابھی بھی کرفیو جاری ہے اور مظاہرے بھی ہو رہے ہیں۔ پونچھ ، نوگام، ہنگواڑہ اور پلوامہ سمیت دیگر علاقوں میں چھاپوں کے خلاف احتجاج شروع کردیا۔ بھارتی فورسز نے احتجاجی مظاہرین پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں 4 کشمیری شہید ہوگئے۔ ادھر بھارتی فوج نے اننت ناگ اور شوپیاں میں فائرنگ کرکے مزید دو بے گناہ نوجوانوں کو شہید کردیا ۔اس دوران وسطی کشمیر سے جنوبی کشمیر تک جاں بحق نوجوانوں کو اشکبار آنکھوں سے نعروں کی گونج میں سپرد خاک کیا گیا۔ دن بھر فورسز ،پولیس اور مزاحمتی مظاہرین کے درمیان جاری رہنے والی جھڑپوں میں200کے قریب نوجوان زخمی ہوئے جبکہ فورسز وردی میں ملبوس اہلکاروں نے پیلٹ اور ٹیر گیس کے دہانوں سے آگ اگلتے ہوئے گولے اور چھرے داغے۔فورسز نے بڈگام،سوپور اور شوپیاں میں مزاحمتی جلوسوں کو منتشر کیا جس کے دوران مظاہرین نے مزاحمت کی۔مزاحمتی خیمے کی کال پر اگرچہ شہر میں شام کو چند لمحوں کیلئے دکانیں کھل گئیں اور ہزاروں لوگ امڈ پڑے تاہم غیر متوقع طور پر آدھے گھنٹے میں تجارتی مراکز بھی بند ہوئے اور سڑکیں سنسان نظر آنے لگیں۔اننت ناگ کے نواحی علاقے بوٹنگو میں علاقہ میں اس وقت سنگین صورتحال پیدا ہوئی جب یہاں مشتعل نوجوانوں کو منتشر کرنے کیلئے پولیس اور فورسز نے ٹیر گیس شلنگ اور پیلٹ فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک درجن سے زیادہ نوجوان زخمی ہوگئے ، جن کو اسپتال منتقل کیا گیا۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ 23سالہ یاور احمد ولد مشتاق احمد ساکنہ بوٹنگو کے جسم میں درجنوں پیلٹ فائر پیوست ہوئے اور مذکورہ نوجوان کو جب ضلع اسپتال اسلام آباد پہنچایا گیا تو یہاں ڈاکٹروں نے اسکو مردہ قرار دے دیا۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ جب23سالہ یاور احمد ڈار کی میت کو جلوس جنازہ کی صورت میں سپرد لحد کرنے کیلئے لیا جارہا تھا تو اس دوران جلوس جنازہ پر پولیس اور فورسز نے آنسو گیس کے گولے داغے اور پیلٹ فائرنگ کی جس کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے۔

مزید : صفحہ اول