ہسپتال میں لڑکا تبدیل کرکے لڑکی دینے کا انکشاف ، وارڈ میں موجود تمام بچوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کرنے کا فیصلہ

ہسپتال میں لڑکا تبدیل کرکے لڑکی دینے کا انکشاف ، وارڈ میں موجود تمام بچوں کا ...

فیصل آباد (ویب ڈیسک) نجی ہسپتال میں مبینہ طور پر لڑکا تبدیل کرکے لڑکی دینے پر لواحقین نے ضلعی کونسل چوک میں احتجاج کیا اور سڑک بلاک کرکے ٹریفک معطل کردی۔ ہسپتال انتظامیہ نے بچے کی تبدیلی کے معاملے پر انکوائری شروع کردی، ہسپتال میں موجود تمام بچوں کا ڈی این اے ٹیسٹ کروانے کا فیصلہ کرلیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق سانگلہ ہل کا رہائشی ایک شخص اکرم کارڈیالوجی سنٹر کے پاس واقع ایک نجی ہسپتال میں ڈلیوری کے لئے اپنی بیوی نسیم بی بی کو لایا جس کو ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے پانچ روز قبل لڑکا پیدا ہونے کی خوشخبری سنائی گئی جس پر اس نے ہسپتال کےءعملہ اور ررشتہ داروں سے مبارکباد سمیٹنے کے ساتھ ساتھ ان کو مٹھائی کھلاکر اپنی خوشی کا اظہار کیا لیکن گزشتہ روز جب ہسپتال سے اس کی بیوی کو فارغ کیا گیا تو انتظامیہ کی جانب سے اس کو لڑکی دے دی گئی جس پر اس نے لڑکی لینے سے انکار کردیا۔

اکرم اور اس کے لواحقین نے ضلع کونسل چوک میں شدید احتجاج کرتے ہوئے ٹریفک معطل کردی اس کا کہنا تھا کہ ہسپتال انتظامیہ نے اس کے ہاں پیدا ونے والے بیٹے کو تبدیل کرکے اسے لڑکی دینے کی کوشش کی ہے۔ واقعہ پر نجی ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر حافظ مختار رندھاوا نے انکوائری کا حکم دے دیا ہے اور اس سلسلہ میں ہسپتال میں موجود تمام بچوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کروانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ایم ایس کا کہنا ہے کہ لڑکی کی پیدائش پر غلطی سے اس پر لڑکے کا ٹیگ لگ گیا تھا تاہم وہ اس کی چھان بین کررہے ہیں۔

مزید : فیصل آباد

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...