چینی ارب پتی نے صحرا کے بیچ میں 200ارب روپے کی قیمتی ترین چیز چھپادی لیکن ایسا کیا کیوں؟ حقیقت منظر عام پر آگئی، امریکہ میں ہنگامہ برپاہوگیا

چینی ارب پتی نے صحرا کے بیچ میں 200ارب روپے کی قیمتی ترین چیز چھپادی لیکن ایسا ...
چینی ارب پتی نے صحرا کے بیچ میں 200ارب روپے کی قیمتی ترین چیز چھپادی لیکن ایسا کیا کیوں؟ حقیقت منظر عام پر آگئی، امریکہ میں ہنگامہ برپاہوگیا

  

نیویارک (نیوز ڈیسک) امریکا کے ہمسایہ ملک میکسیکو کے صحرا میں چھپائی گئی لاکھوں ٹن قیمتی دھات کے انکشاف نے پورے امریکا میں کھلبلی مچا دی ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق میکسیکو کے صحرا میں 10 لاکھ میٹرک ٹن ایلومینیم کا ڈھیر پڑا ہے، جس کی مالیت تقریباً 200 ارب روپے بتائی جا رہی ہے۔

وال سٹریٹ جرنل نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ یہ ایلومینیم چینی ارب پتی کاروباری شخصیت لیو زانگ شیان کی ملکیت ہے، جو کہ چینی کمیونسٹ پارٹی کے ڈپٹی سیکرٹری بھی ہیں۔ وہ دنیا میں ایلومینیم پیدا ہونے والی دوسری بڑی کمپنی زانگ وانگ ہولڈنگ لمیٹڈ کے سربراہ بھی ہیں۔ امریکی اخبار کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ میکسیکو کے صحرا میں پڑی لاکھوں ٹن ایلومینیم دھات لیو کی کمپنی کی ملکیت ہے جو اسے غیر قانونی طریقے سے امریکہ میں فروخت کررہے تھے۔

امیر بنناچاہتے ہیں تو یہ تین کام کریں، ملک ریاض نے نوجوانوں کو مشورہ دیدیا

رپورٹ کے مطابق امریکہ میں قانونی طریقے سے ایلومینیم درآمد کرنے پر بھاری ٹیکس ادا کرنا پڑتا ہے اور دعویٰ کیا گیا ہے کہ لیو نے اس ٹیکس سے بچنے کے لئے لاکھوں ٹن ایلومینیم میکسیکو پہنچائی جہاں سے اسے سرحد پار امریکہ میں بیچا جارہا تھا۔ اس معاملے کا انکشاف اس وقت ہو اجب ایک امریکی ایلومینیم کمپنی ایکسٹروڈر کے سربراہ جیف ہینڈرسن نے میکسیکو کے صحرائی علاقے میں مشکوک دھات کی موجودگی کی اطلاعات پر ایک پائلٹ کو علاقے کا فضائی جائزہ لینے کے لئے بھیجا۔

امریکی ایلومینیم کمپنیوں کا کہنا ہے کہ بیرون ملک سے غیر قانونی راستوں سے آنے والی ایلومینیم نے ان کے کاروبار کو تباہ کردیا ہے۔ امریکہ میں چند سال قبل تک ایلومینیم پیدا کرنے والی 23 کمپنیاں تھیں مگر اب ان کی تعداد کم ہوکر 5 رہ گئی ہے، اور امریکی کمپنیاں اس کی ذمہ داری غیر قانونی درآمد پر عائد کر رہی ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس