اسلام آباد ہائی کورٹ کا تفصیلی فیصلہ ۔۔۔ناموس رسالتﷺ (25)

اسلام آباد ہائی کورٹ کا تفصیلی فیصلہ ۔۔۔ناموس رسالتﷺ (25)

ناروے کے دستور کی دفعہ100 میں یہ واضح طورپر اعلان کیاگیا ہے کہ :

‘‘There shall be liberty of the Press. No person may be punished for any writing, what ever its contents, which he has caused to be printed or published, unless he will fully and manifestly has either himself shown or incited others to disobedience to the laws, contempt of religion, morality or the constitutional powers or resistance to their orders of has made false and defamatory accusations against any one.’’

اس حوالے سے جرمنی کاقانون بھی بہت واضح ہے، ضابطہ تعزیرات جرمنی کے گیارویں باب بعنوان ’’جرائم جو مذہب اورفلسفہ زندگی سے متعلق ہیں ‘‘ کی دفعہ 166میں یہ جرم قرار دیاگیا ہے کہ :

(1) Whoever publicly or through dissemination of writings( Section 11 sub۔section (3) insults the content of others, religious faith or faith related to a philosophy of life in a manner that is capable of disturbing the public peace, shall be punished with imprisonment for not more than thre e years or fine.

(2) Whoever publicly or through dissemination of writings( Section 11 subsection (3) insults a church, other religious society, or organization dedicated to a philosophy of life located in Germany, or their institutions or customs in a manner that is capable of disturbing the public peace, shall be similarly punished.’’

اسی طرح اسی قانون کی دفعہ167جوکہ مذہب کے عمل میں مداخلت کے عنوان سے ہے، یہ قرار دیتی ہے کہ :

‘‘(1) Whoever:

1. Intentionally and in a gross manner disturbs a religious service or an act of a religious service of a church or other religious society located in Germany: or

2. Commits insulting mischief at a place dedicated to the religious service or such a religious society, shall be punished with imprisonment for not more than three years or a fine.

(II)Corresponding celebrations of an organization dedicated to a philosophy of life located in Germany shall be the equivalent of religious services.’’

فن لینڈ کے قانون بعنوان مذہب کے تقدس کی خلاف ورزی کی دفعہ 10اس ضمن میں توہین مذہب کی تعریف کرتے ہوئے یہ قرار دیتی ہے کہ:

‘‘A person who (I) publicly blasphemes against God or, for the purpose of offending, publicly defames or desecrates what is otherwise held to be sacred by a church or religious community, as referred to in the Act on the Freedom of Religion (267/1998’’)

اسی طرح آسٹریا کے ضابطہ تعزیرات فوجداری کی دفعہ188 میں مذہبی جذبات کو مجروح کرنا جرم قرار دیاگیا ہے۔اسی طرح نیدرلینڈکے تعزیرات فوجداری کی دفعہ147 میں بھی بلاسفیمی کو جرم قراردیاگیا ہے۔ ڈاکٹر شیریں مزاری نے اپنے ایک مضمون بعنوان :

‘‘Multiculturalism and Islam in Europe’’

’’میں نیدر لینڈ کے ضابطہ فوجدار ی کی وضاحت کرتے ہوئے لکھا ہے کہ :

‘‘The Netherlands: Blasphemy is a criminal offence under the Penal Code Article 147 ( introduction and subsection I Wet boek van Strefrecht ),though this provision only covers expressions concerning God, and not saints and other revered religious figures (‘‘godalaatering’’). Further, the criminal offence of blasphemy has been interpreted to require that the person who makes the expression must have had the intention to be ‘‘scornful’’ (‘‘Smalend’’).’’

اسی طرح سپین کے قانون بابت توہین کے ضمن میں لکھتی ہیں کہ :

"Spain: The crime of blasphemy was abolished in 1988. The Constitutional Court has ruled that the right to freedom of expression, broadly protected by Article 20 of the Constitution, can be subject to restriction saimed both at the protection of the rights of others or at the protection of other constitution ally protected interests. "

’’آئرلینڈ کے دستور کی دفعہ40 میں بھی اظہاررائے کی آزادی کی حدود وقیود درج ذیل طورپر متعین کی گئی ہیں:

‘‘6.1: The State guarantees liberty for the exercise of the following rights, subject to public order and morality:

(1) The right of the citizens to express freely their convictions and opinions. The education of public opinion being, however, a matter of such grave import to the common good, the State shall endeavour to ensure that organs of public opinion, such as the radio, the press, the cinema, while preserving their rightful liberty of expression, including criticism of Government policy, shall not be used to under mine public order or morality or the authority of the State.’’

18۔بین الاقوامی انجمنوں واداروں،بین الاقوامی معاہدات ، بین الاقوامی اعلامیے اور یورپ کے مختلف ممالک کے قانون سے یہ واضح ہے کہ توہین مذہب، توہین مقدس شخصیات اور افراد واجتماع کے مذہبی جذبات واحساسات کا لحاظ اوراس ضمن میں اظہار رائے و تقریر وبیان پر مناسب قانونی قدغن دنیاکے تمام مہذب ممالک کاخاصہ ہے۔ اس کے علاوہ بین الاقوامی عدالتوں کے فیصلہ جات بھی اس ضمن میں اہمیت کے حامل ہیں۔ اقوام متحدہ کی ہیومن رائٹس کمیٹی (HRC) جسے بین الاقوامی معاہدہ برائے شہری و سیاسی حقوق کے تحت قائم کیا گیا ہے ، نے اپنے فیصلہ نمبری 3991550/مورخہ 8 نومبر1998ء میں ‘‘رابرٹ فوریسن بنام فرانس ’’ میں دفعہ (3) 19کی تشریح کرتے ہوئے یہ قرار دیاکہ فرانس کی جانب سے ہولوکاسٹ پر اظہارِ خیال سے یہودیوں کے مذہبی جذبات اور حقوق کی پامالی ہوئی ہے۔

ترجمہ: چونکہ مصنف کی طرف سے بیان اس نوعیت کا ہے جس سے یہودیوں کے خلاف جذبات بڑھتے یا مضبوط ہوتے لہٰذاقانونی قدغن یہودیوں کے خوف سے آزاد فضاء میں زندگی گزارنے کے لئے عائد کی گئی ہے۔ان وجوہات کی بنا پرکمیٹی اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ مصنف کے آزاد�ئ اظہار پر عائد کردہ قیود معاہدہ کی دفعہ(3) 19 کے فقرہ نمبر 3 (الف) کی رو سے بالکل درست ہیں۔

‘‘Since the statements made by the author133. Were of a nature as to raise or streng then anti ۔ Semitic feelings, the restriction served the respect of the Jewish community to live free from fear of an atmosphere of anti۔Semitism. The Committee therefore concludes that the restriction of the author’s freedom of expression was permissible under article 19, paragraph 3 (a), of the Covenant.’’

(جاری ہے)

یورپی عدالت برائے انسانی حقوق

(ECHR)نے ایک مقدمہ میں جس میں سکول کے بچوں کیلئے ایک کتاب

"The Red little School Book"

کی اشاعت، جس میں فحش اورگھٹیا جنسی مواد کی تفصیلات دی گئی تھیں کے پبلشر پر برطانوی حکومت کی جانب سے Obscene Publication Act 1964 کے تحت مقدمہ کے حوالے سے مشہور ہینڈی سائیڈ کیس میں حق اظہاررائے کی وضاحت کرتے ہوئے قرار دیا کہ:

مزید : اداریہ