برما میں مسلمانوں کا قتل عام عالمی دہشتگردی ہے ،حسن حساس

برما میں مسلمانوں کا قتل عام عالمی دہشتگردی ہے ،حسن حساس

شیرگڑھ(نامہ نگار) تنظیم تاجران نیو اڈہ کے صدر سلیم دولت زئی اور لیبر ایجوکیشن ارگنائزیشن کے صدر حسن حساس نے کہا ہے برما میں مسلمانوں کی نسل کشی عالمی دھشت گردی ہے اقوام متحدہ کی خاموشی معنیٰ خیز ہے اقوام متحدہ اور اسلامی ملکوں کے اتحاد تنظیم فوری طور پر مسلمانوں کی نسل کشی اور قتل عام روکنے میں اپنا کردار ادا کریں تفصیلات کے گزشتہ روز برما کے مسلمانوں کے ساتھ ہونے والے مظالم کے خلاف لیبر ایجوکیشن آرگنائیزیشن اور تنظیم تاجران نیو اڈہ کے زیر اہتمام ایک واک کا اہتمام کیا گیا واک چارسدہ چوک سے شروع ہوا جس میں نیو اڈہ تنظیم تاجران اور سول سوسائٹی کے لوگوں نے کثیر تعداد میں حصہ لیا۔واک مین روڈ پر سے ہوتی ہوئی ملاکنڈ چوک پہنچی جہاں ایک جلسے کی شکل اختیار کی احتجاجی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے صدرتنظیم تاجران نیو اڈہ کے صدر سلیم گل دولت زئی نے کہا کہ وقت آگیا ہے کہ اب مسلمان ممالک کو اس بات پر سوچنا ہوگا کہ وہ ایک ہوجائے اور ایک ایسا فلیٹ فارم بنائے جس سے عالم اسلام اور مسلمان کو تحفظ ملے ۔انسانیت کی باتیں کرنے والے مسلمانوں کے قتل عام پر خاموش تماشائی بنے بیٹھے ہیں۔انہوں کہا کہ برما میں مسلمانوں کی نسل کشی عالمی دھشت گردی ہے اقوام متحدہ کی خاموشی معنیٰ خیز ہے۔احتجاجی مظاہرے سے لیبر ایجوکیشن کے صدر حسن حساس،صاحب زادہ،مصطفیٰ کمال،شیر علی خان اور مولانا محمد علی خان نے بھی خطاب کیا انہوں نے کہا کہ برما میں مسلمانوں کی نسل کشی جاری ہے اور مسلمانوں کو بے دردی سے قتل کیا جاتا ہے اسلام امن اور محبت کا دین ہے ،برما کے مظالم سے یہ بات واضح پتہ چلتی ہے کہ چند ایک عناصر دنیا میں فسادات پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور انہی فسادات میں نقصان غیر منظم مسلمانوں کا ہوگا برما کے مظالم کو دیکھتے ہوئے ہم اس بات کو سمجھ سکتے ہیں کہ دنیا میں مسلمان تنہا ہے حکومت پاکستان فوری طور پر برما کے سفارتخانے کوبند کیا جائے اور سفیر کو ملک بدر کیا جائے ہم برما مسلمانوں کے ساتھ ہے انہوں نے موجود لوگوں سے کہا کہ اگر حکومت پاکستان کسی مجبوری کے تحت ہمیں جہاد کا حکم نہیں دیتے تو آپ وعدہ کرے کہ ہم بحیثیت مسلمان خود جائیں گے۔جلسے کے آخر میں مسلمانوں کے اتحاد اور برما کے مسلمانوں کے تحفط کے لئے دعا کی گئی

مزید : پشاورصفحہ آخر