ہاکی میں وزیر اعظم کی پالیسی کا نفاذ ناگزیر ہوگیا ‘ نوید عالم

12 ستمبر 2018

لاہور(سپورٹس رپورٹر)پاکستان ہاکی ٹیم نے گزشتہ ہفتے ایشین گیمز میں چوتھی پوزیشن حاصل کی اور ٹوکیو اولمپکس میں شرکت کا براہ راست موقع ضائع کردیا جبکہ پی ایچ ایف انتظامیہ بھی اس شکست کے بعد منظر عام سے غائب ہوگئی ہے ایسے میں ڈائریکٹر ڈومیسٹک گیم ڈیولپمنٹ پی ایچ ایف نوید عالم میدان میں کود پڑے ہیں اور وزیراعظم عمران خان اور وزیر بین الصوبائی رابطہ فہمیدہ مرزا اور پی او اے سے درخواست کی ہے کہ پی ایچ ہاؤس کی میٹنگ کال کی جائے تاکہ قومی کھیل کو مزید تباہی سے بچایا جائے۔ لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے نوید عالم نے کہا کہ ہاکی میں وزیر اعظم عمران خان کی پالیسی کا نافذ ناگزیر ہوگیا ہے، نوید عالم نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ میرے ہاؤس کو آرڈر کرنے کو بغاوت نہیں کہا جاسکتا، 94 کے ورلڈ چیمپئن نے کہا کہ اولمپک کوالیفائنگ کا بہترین موقع گنوا دیا گیا، یہ سانحہ ہے، 14 سال بعد 6 ملکی ٹورنامنٹ کی میزبانی ملی، کیا اس کیلئے تیاری کی تھی ؟۔ انہوں نے کہا کہ 6 ملکی ٹورنامنٹ کی میزبانی کا مواقع ضائع ہوگیا، کون زمہ دار ہے ؟۔ نوید عالم نے کہا کہ گزشتہ روز میڈیا پر ہاکی کھلاڑیوں کے کمبل چرانے کی خبریں چلیں، کیا یہ تربیت دی گئی ہے نوجوان پلیئرز کو۔ ایک سوال کے جواب میں نوید عالم نے کہاکہ ہاکی کو بچانے کیلئے 64 ممبرز ہاؤس کے اجلاس کی درخواست کر چکے ہیں، فی الفور ہاکی فیڈریشن کے ہاؤس کا اجلاس طلب کیا جانا چاہیے۔ ماضی کے فل بیک نے کہا کہ پاکستان ہاکی تباہی پر کھڑی ہے، واٹس ایپ پر ہاکی نہیں چل سکتی، غیر زمہ دارانہ رویے سے واٹس ایپ پر ہاکی چلا کر حشر سب کے سامنے ہے۔

نوید عالم نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں مزید بربادی نہ ہو، کھیلنا اور انتظامیہ چلانا دو مختلف کام ہے۔ آئی پی سی کو اختیار ہے کہ اس تباہی میں کردار ادا کرے۔ عمران خان سپورٹس مین ہے، ان کی پالیسی پر عملدرآمد کرنا ہوگا۔

مزیدخبریں