افغان امن مذاکرات کی ناکامی کی وجہ افغان حکومت کی عدم شمولیت ہے، ایمل ولی خان

افغان امن مذاکرات کی ناکامی کی وجہ افغان حکومت کی عدم شمولیت ہے، ایمل ولی خان

شیرگڑھ(نامہ نگار)عوامی نیشنل پا رٹی کے صوبائی صدر ایمل ولی خان نے کہا ہے کہ افغان امن مذاکرات کی نا کامی کی بنیا دی وجہ مذاکرات میں مسلہ کا اصل فریق افغان حکومت کو مذاکرات میں شامل نہ کرنا ہے طالبان امریکہ ایک دوسرے کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے مذاکرات کررہے ہیں دھشتگردی امریکہ کا نہیں افغانستان کا مسلہ ہے افغانستان آزاد اور خود مختا ر ملک ہے پا کستان کا پانچواں صوبہ نہیں امریکہ پاکستان کو افغانستان کے مستقبل کا فیصلہ افغان قوم خود کر نے کی اجازت دینا ہو گا پر امن افغانستان پر امن پاکستان کی ضمانت ہے دوسروں کے گھر میں پتھر پھینکنے کے جواب میں آپ کے گھر میں بھی پتھر ہی گریں گے کشمیریوں کے ساتھ ہمدردی ہے مگر کشمیر میں 210 دن کا کر فیوں کا رونا رونے والوں کو افغانستان میں 40 سالوں سے جا ری جنگ اور پختونوں کی نسل کشی کیوں نظر نہیں آرہی ہے وہ گزشتہ روز میاں عیسٰی کے لوند خوڑ مقام پر خد ائی خدمتگار اے این پی کے سابق صوبائی سینئر نا ئب صدرانجینئرعباس خان مر حوم کی فا تحہ خوانی کے موقع پر مقامی میڈیا کے نما ئندوں کے ساتھ گفتگو کر رہے تھے انہوں نے اس موقع پر مرحوم کی فاتحہ خوانی کرتے ہو ئے غم ذدہ خاندان کے ساتھ تعزیت کی اور ہمدردی کا اظہار کیا اور کہا کہ عباس مر حوم کا خاندان اس غم میں اکیلا نہیں ہم سب ان کے ساتھ اس غم میں شریک ہیں انہوں نے مزید کہا اس خطے پر پختون قوم کی نسل کشی کی سازش صدیوں سے جا ری ہے ہم اول روز سے کہتے چلے آرہے ہیں کہ افغان جنگ اصل میں دوسروں کی جنگ ہے مگر مر حوم جنرل ضیا ء الحق نے ڈالر کما نے کیلئے امریکہ کے مفادات کی یہ جنگ جھاد قرار دے دیا ان کی اس غلطی کے با عث آج پوری پختوم قوم ان کی لگا ئی گئی اس آگ میں جل رہی ہے انہوں نے کہا کہ امریکہ طالبان مذاکرات سے تھوڑی بہت امید پید ہو گئی تھی کہ پختون کے گھر میں لگی آگ بجھ جا ئے گی مگر امریکہ کے صدر ٹرمپ نے بیک جنبش قلم مذکرات کو ختم کر دیئے امریکہ کے صدر ٹرمپ میں کو ئی سیا سی سمجھ بوجھ موجود نہیں وہ ایک بے وقوف شخص ہے ٹرمپ اور عمران خان میں سیا سی طور پر کو ئی فرق نہیں دونوں سیاست کے ابجد میں سے بھی واقف نہیں دونوں ہر اعتبار سے ایک جیسے ہیں انہوں نے امریکہ طالبان امن مذاکرات کی ناکامی کا اصل افغان کااصل فریق افغان حکومت کو مذاکرات سے با ہر رکھنا قرار دے دیااور کہا کہ پر امن افغانستا امریکہ کا نہیں افغان قوم کی ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ ہم نے باربار کہا کہ دھشتگردوں میں اچھے برے نہیں ہو تے سب دھشتگردا یک جیسے برے ہیں اور انسانیت کے دشمن ہیں امریکہ اور پاکستان کو ہماری یہ بات تسلیم کرنا ہو گاانہوں کہاپختون قوم نے پی ٹی آئی کو ہر گزمنڈیٹ نہیں دی اہے یہ پی ٹی آئی قوم پر اوپر سے مسلط کی گئی ہے یہ حکومت فرشتوں کی لائی گئی حکومت ہے اور اول روز سے آج تک وہی فرشتے یہ حکومت ہر سطح پر سپورٹ کرتی ہے انہوں نے کہا ملک کی سلامتی دفاع اور جمہوریت کے بقا اور استحکام کیلئے ملٹری اسٹبلشمنٹ کو سیا سی میدان سے نکل کر بیرکوں اور سرحدات پر جا نا ہو گا کیوں کہ سیا ست کر نا سیا ستدانوں کا کام ہے انہوں کہا کہ اسلام آباد دھرنے کا ابھی فیصلہ نہیں ہو اہے اے پی سی اور رہبر کمیٹی اس سلسلے میں فیصلہ کریں گے اور وہی فیصلہ اے این پی کا فیصلہ ہو گا انہوں کہا کہ میرا یقین نہیں دھر نا وہی نتائج دیں گے جو اپوزیشن کی امید ہے کیوں کہ آسمانی فرشتے اپوزیشن کو دھرنے کرنے نہیں دے گا 120 دن کا دھر نا اصل میں عمران خان اور پی ٹی آئی نے نہیں دیا تھا فرشتوں نے دی تھی مجھے خدشہ ہے کہ یہ دھرنا کہیں خڑ کمر وزیرستان کا احتجاج بن نہ جا ئے

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...