اک بار کہو تم میری ہو | ابن انشا |

 اک بار کہو تم میری ہو | ابن انشا |
  اک بار کہو تم میری ہو | ابن انشا |

  

                                                                                                                                                                         اک بار کہو تم میری ہو

ہم گھوم چکے بستی بن میں

اِک آس کی پھانس لیے من میں

کوئی ساجن ہو، کوئی پیارا ہو

کوئی دِیپک ہو، کوئی تارا ہو

جب جیون رات اندھیری ہو

اِک بار کہو تم میری ہو

جب ساون بادل چھائے ہوں

جب پھاگن پُھول کِھلائے ہوں

جب چندا رُوپ لٹاتا ہو

جو سورج دُھوپ نہاتا ہو

یا شام نے بستی گھیری ہو

اِک بار کہو تم میری ہو

ہاں دل کا دامن پھیلا ہے

کیوں گوری کا دل میلا ہے

ہم کب تک پِیت کے دھوکے میں

تم کب تک دُور جھروکے میں

کب دِید سے دل کو سیری ہو

اِک بار کہو تم میری ہو

کیا جھگڑا سود خسارے کا

یہ کاج نہیں بنجارے کا

سَب سونا رُوپا لے جائے

سب دُنیا، دُنیا لے جائے

تم ایک مجھے بہتیری ہو

اِک بار کہو تم میری ہو

شاعر: ابن انشا

(اس بستی کے کوچے میں،سال اشاعت،1978)

Ik Baar Kaho Tum Meri Ho

Ham Ghoom Chukay Basti BanMen

Ik Aas Ki Phaans Liay Man Men

Koi Saajan Ho Koi Payaara Ho

Koi Deepak Ho Koi Taara Ho

Jab Jeevan Raat Anderi Ho

Ik Baar Kaho Tum Meri Ho

Jab Saawan Baadal Chhaaey Hon

Jab Phaagan Phool Nahaaey Hon

Jab Chanda Roop Lutaata Ho

Jab Sooraj Dhoop Nahaata Ho

Ya Shaam Nay Basti Ghairi Ho

Ik Baar Kaho Tum Meri Ho

Haan Dil Ka Daaman Phaila Ho

Kiun Gori Ka Dil Maila Hay

Ham Kab Tak Peet K Dhokay Men

Ham Kab Door Jharokay Men

Kab Deed Say Dil Ko Sairi Ho

Ik Baar Kaho Tum Meri Ho

Kaya Jhagrra Sood Khasaaray Ka

Yeh Kaaj Nahen Banjaaray Ka

Sab Sona Roopa Lay Jaao

Sab Dunya, Dunya Lay Jaao

Tum Aik Mujhay Batairi Ho

Ik Baar Kaho Tum Meri Ho

Poet:Ibne Insha

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -