ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں | ابن انشا |

ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں | ابن انشا |
ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں | ابن انشا |

  

                                                                                                                                                        ایک چھوٹا سالڑکا

ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں

ایک میلے میں پہنچا ہمکتا ہُوا

جی مچلتا تھا ایک اک شے پر مگر

جیب خالی تھی، کچھ مول لے نہ سکا۔

لوٹ آیا لئے حسرتیں سینکڑوں

ایک چھوٹا سا لڑکا تھا میں جن دنوں۔

خیر محرومیوں کے وہ دن تو گئے۔

آج میلہ لگا ہے اسی شان سے

آج چاہوں تو ایک اک دکان مول لوں۔

آج چاہوں تو سارا جہاں مول لوں۔

نارسائی کا اب جی میں دھڑکا کہاں!

پر وہ چھوٹا سا، الہڑ سا لڑکا کہاں

شاعر: ابنِ انشا

 (اس بستی کے کوچے میں،سال اشاعت،1978)

Aik Chota Sa  Larrka Tha Main Jin Dino

Aik Mailay Men pahuncha Humakta Hua

Ji Machalta Tha Aik Aik Shay Par Magar

Jaib Khaali Thi Kuch Moal Na Lay Saka

Laot Aaya Liay Hasraten Sainkarron

Aik Chota Sa  Larrka Tha Main Jin Dino

Khair Mehroomiun K Wo Din To Gaey

Aaj Mela Laga Hay Aaj Usi Shaan Say

Aaj Chaahun To Ik Ik Dukaan Mol Lun

Aaj Chaahun To Saara Jahaan Mol Lun

Narasaai Ka Ab Ji Men Dharrka Kahaan

Par Wo Chhota Sa , Alharr Sa Larrka Kahaan

Poet: Ibne Insha

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -