انشاء جی اُٹھو اب کُوچ کرو اس شہر میں جی کا لگانا کیا | ابن انشا |

انشاء جی اُٹھو اب کُوچ کرو اس شہر میں جی کا لگانا کیا | ابن انشا |
انشاء جی اُٹھو اب کُوچ کرو اس شہر میں جی کا لگانا کیا | ابن انشا |

  

انشاء جی اُٹھو اب کُوچ کرو اس شہر میں جی کا لگانا کیا

وحشی کوسکوں سے کیا مطلب جوگی کا نگر میں ٹھکانا کیا

پھر ہجر کی لمبی رات یہاں سنجوگ کی تو بس اک گھڑی

جو دل میں ہے لب پر آنے دو شرمانا کیا گھبرانا کیا

اس دل کے دریدہ دامن میں دیکھو تو سہی سوچو تو سہی

جس جھولی میں سو چھید ہوئے اس جھولی کا پھیلانا کیا

شب گزری چاند بھی ڈوب گیا زنجیر پڑی دروازے پر

کیوں دیر گئے گھر آئے ہو سجنی سے کرو گے بہانہ کیا

رہتے ہو جو ہم سے دور بہت مجبور ہو تم مجبور بہت

ہم سمجھوں کا سمجھانا کیا ہم بہلوں کا بہلانا کیا

جب شہر کے لوگ نہ رستہ دیں کیوں بن میں نہ جا بسرام کریں

دیوانوں کی سی نہ بات کرے تو اور کرے دیوانہ کیا

شاعر: ابن انشا

( اس بستی کے کوچے میں،سال اشاعت،1978)

Insha Ji Utho, Ab Kooch Karo, Iss Shehr Men Ji Ka Lagaana Kaya

Wehshi Ko Sakoon Say Kay Matlab, Jogi Ka Nagar Men Thikaana Kaya

Iss Dil K Dareeda Daaman Men Dekho To Sahi , Socho To Sahi

Jiss Jhilo Men Sao Chaid Huay Uss Jholi Ka Phailaana Kaya

Shab Beeti, Chaand Bhi Doob Chalaa, Zanjeer Parri Darwaazay Par

Kiun Dair Gaey Ghar Aaey Ho Sajni Say Karo Gay Bahaana Kaya

Phir Hijr Ki Lambi Raat Yahaan, Sanjog Ki To Yahi Hay Gharri

Jo Dil Men Hay Lab Par Aanay Do Sharmaana Kaya , Ghabraana Kaya

Uss Roz Jo Un Ko Dekha Hay, Ab Khaab Ka Aalam Lagta Hay

Uss Roz Jo Um Say Baat HuiWo Baat Bhi Thi Afsaana Kaya

Uss Husn K Sachay Moti Ko Ham Dekh Saken Par Chhoo Na Saken

Jisay Dekh Saken Par Chhu Na SakenWo Daolat Kaya, Wo Khazaana Kaya

Uss KO Bhi Jalaa Dukhtay Huay Man! Ik Shola Laal Bhabhuka Ban

Yun Aansu Beh Jaana Kasia Yun Maati Men Mill Jaana Kaay

Jab Sheh K Log Na Rasta Den Kiun Ban Men Na Ja Bisraam Karay

Dewaanon Ki Si Na Bat Karay To Aor Karay Dewaana Kaya

Poe: Ibne Insha

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -