سب مایا ہے، سب ڈھلتی پھرتی چھایا ہے | ابن انشا |

سب مایا ہے، سب ڈھلتی پھرتی چھایا ہے | ابن انشا |
 سب مایا ہے، سب ڈھلتی پھرتی چھایا ہے | ابن انشا |

  

                                                                                                                                                                              سب مایا ہے

سب مایا ہے، سب ڈھلتی پھرتی چھایا ہے

اس عشق میں ہم نے جو کھویا جو پایا ہے

جو تم نے کہا ہے، فیض نے جو فرمایا ہے

سب مایا ہے

ہاں گاہے گاہے دید کی دولت ہاتھ آئی

یا ایک وہ لذت نام ہے جس کا رسوائی

بس اس کے سوا تو جو بھی ثواب کمایا ہے

سب مایا ہے

اک نام تو باقی رہتا ہے، گر جان نہیں

جب دیکھ لیا اس سودے میں نقصان نہیں

تب شمع پہ دینے جان پتنگا آیا ہے

سب مایا ہے

معلوم ہمیں سب قیس میاں کا قصہ بھی

سب ایک سے ہیں، یہ رانجھا بھی یہ انشا بھی

فرہاد بھی جو اک نہر سی کھود کے لایا ہے

سب مایا ہے

کیوں درد کے نامے لکھتے لکھتے رات کرو

جس سات سمندر پار کی نار کی بات کرو

اس نار سے کوئی ایک نے دھوکا کھایا ہے

سب مایا ہے

جس گوری پر ہم ایک غزل ہر شام لکھیں

تم جانتے ہو ہم کیونکر اس کا نام لکھیں

دل اس کی بھی چوکھٹ چوم کے واپس آیا ہے

سب مایا ہے

وہ لڑکی بھی جو چاند نگر کی رانی تھی

وہ جس کی الھڑ آنکھوں میں حیرانی تھی

آج اس نے بھی پیغام یہی بھجوایا ہے

سب مایا ہے

جو لوگ ابھی تک نام وفا کا لیتے ہیں

وہ جان کے دھوکے کھاتے، دھوکے دیتے ہیں

ہاں ٹھوک بجا کر ہم نے حکم لگایا ہے

سب مایا ہے

جب دیکھ لیا ہر شخص یہاں ہرجائی ہے

اس شہر سے دور ایک کُٹیا ہم نے بنائی ہے

اور اس کٹیا کے ماتھے پر لکھوایا ہے

سب مایا ہے

شاعر: ابن انشا

( اس بستی کے کوچے میں،سال اشاعت،1978)

Sab Maaya Hay, Sab Dhalti Phirti Chhaaya Hay

Iss Eshq Men Ham Nay Jo  Khoya Jo Paaya Hay

Jo Tun Nay Kaha, FAIZ Nay Jo Farmaaya Hay

Sab Maaya Hay

Haan Gaahay Gaahay Deed Ki Daolat Haath Aai

Yaan Aik Wo Lazzat Naam Hay Jiss  Ka Ruswaai

Bass Iss K Siwa To Jo Bhi Sawaab Kamaaya Hay

Sab Maaya Hay

Ik Naam To Baaqi Rehta Hay Gar Jaan Nahen

Jab Dekh Laya  Iss Saoday Men Nuqsaan Nahen

Tab Shama Pe Denay Jaan  Pitanga Aaya Hay

Sab Maaya Hay

Maloom Hamen Sab QAIS Miaan Ka Qissa Bhi

Sab Aik Say Hen Yeh RANJHA Bhi , Yeh INSHA Bhi

FARHAD Bhi Jo Ik Nehr Si Khod K Laaya  Hay

Sab Maaya Hay

Kiun Dar K Naamay Likhtay Likhtay Raat Karo

Jiss Saat Samandar Paar Ki Naar Ki Baat Karo

Uss Naar Say Koi Aik Nay Dhoka Khaaya Hay

Sab Maaya Hay

Jiss Gori Par Ham Aik Nazar Har Shaam Likhen

Tum Naantay Ham Kiun Kar Uss Ka Naam Likhen

Dil Uss Ki Bhi Chokhat Choom K Waapas Aaya Hay

Sab Maaya Hay

Wo Larrki Bhi Jo Chaand Nagar Ki Raani Thi

Wo Jiss Ki Alharr Aankhon Men Hairaani Thi

Aaj Uss Nay Bhi Paighaam Yahi Bhijwaaya Hay

Sab Maaya Hay

Jo Log Abhi Tak Naam Wafa  Ka Laitay Hen

Wo Jaan K Dhokay Khaatay Dhokay Detay Hen

Haan Thok Baj K Ham Nay Hukm Lagaaya Hay

Sab Maaya Hay

Jab Dekh Laya Har Shakhs Yahan Harjaai Hay

 Iss Shehr Say Door  Ik Kuttya Ham Nay  Banwaai Hay

Aor Uss Kuttya K Maathay Par Likhwaaya Hay

Sab Maaya Hay

Poet: Ibne Insha

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -