ہم سے الفت جتائی جاتی ہے | احسان دانش |

ہم سے الفت جتائی جاتی ہے | احسان دانش |
ہم سے الفت جتائی جاتی ہے | احسان دانش |

  

ہم سے الفت جتائی جاتی ہے

بے قراری بڑھائی جاتی ہے

دیکھ کر ان کے لب پہ خندۂ نور

نیند سی غم کو آئی جاتی ہے

غم الفت کے کارخانے میں

زندگی جگمگائی جاتی ہے

ان کی چشم کرم پہ ناز نہ کر

یوں بھی ہستی مٹائی جاتی ہے

بزم میں دیکھ رنگ آمد دوست

روشنی تھرتھرائی جاتی ہے

دیکھ اے دل وہ اٹھا رہی ہے نقاب

اب نظر آزمائی جاتی ہے

ان کے جاتے ہی کیا ہوا دل کو

شمع سی جھلملائی جاتی ہے

تیری ہر ایک بات میں احسان

اک نہ اک بات پائی جاتی ہے

شاعر:احسان دانش

(شعری مجموعہ:چراغاں)

Ham Say Ulfat Jataai Ja Rahi Hay

BeQaraari Barrhaai Ja Rahi Hay

Dekh Kar Un K Lab Pe Khanda e Noor

Neend Si  Gham Ko Aa Rahi Hay

Gham e Ulfat K Kaarkhaanay Men

Zindagi Jagmagaai Ja Rahi Hay

Un Ki Chashm e Karam Pe Naaz Na Kar

Yun Bhi Hasti Mitaai Ja Rahi Hay

Bazm Men Dekh Rang e Aamad e Dost

Raoshni Thartharaai Ja Rahi Hay

Dekh Ay Dil ، Wo Uthaa Rahi Hay Naqaab

Ab Nazar Aazmaai Ja Rahi Hay

Un K Jaatay Hi Kaya Hua Dil Ko

Shama Si Jhilmilaai Ja Rahi Hay

Teri Har Aik Baat Men EHSAAN

Ik Na Ik Baat Paai Ja Rahi Hay

Poet: Ehsan Danish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -