براہو اس محبت کا کہاں تک بات جا پہنچی | احسان دانش |

براہو اس محبت کا کہاں تک بات جا پہنچی | احسان دانش |
براہو اس محبت کا کہاں تک بات جا پہنچی | احسان دانش |

  

براہو اس محبت کا کہاں تک بات جا پہنچی

شکستِ ضبط سے اشکِ رواں تک بات جا پہنچی

تمہارے حسن کی روداد سے آغاز تھا لیکن

مری دیوانگی کی داستاں تک بات جا پہنچی

وہاں شعلوں سے اُلجھی کونپلیں، کانٹوں پہ گل ٹوٹے 

جہاں خونِ ضمیرِ گلستاں تک بات جا پہنچی

محبت میں مجھے مارا مری زود اعتباری نے

یہ میری سادگی تھی رازداں تک بات جا پہنچی

ہے سارا کارواں بے راہ کون اب اس کو سمجھائے

کہ تنظیمِ گروہِ رہزناں تک بات جا پہنچی

بصد طنز و حقارت مسکرائے ان کے دیوانے

کہیں جب وسعتِ کون و مکاں تک بات جا پہنچی

نشیمن خاک کا اک ڈھیر تھا لیکن سحر ہوتے

ہوا سنکی تو سارے گلستاں تک بات جا پہنچی

بھریں گے کیا نہ بجلی روح میں سجدے جبینوں کے

کہ توہینِ وقارِ آستاں تک بات جا پہنچی

عمل میرے مجھے احسان کیا جنت میں لے جاتے

بھلے کو اس شفیعِ عاصیاں تک بات جا پہنچی

شاعر: احسان دانش

(شعری مجموعہ: فصلِ سلاسل، سال اشاعت،1980)

Bura     Ho     Iss     Muhabbat     Ka     Kahan Tak   Baat    Ja    Pahunchi

Shakist  -e -Zabt      Say Ashk   -e -    Rawaan    Tak      Baat      Ja        Pahunchi

Tumhaaray     Husn    Ki    Roodaad   Say Aaghaaz   Tha    Lekin

Miri    Dewaangi    Ki     Daastaan     Tak      Baat     Ja    Pahunchi

Wahaan     Sholon     Say     Uljhi       Konpalen   ,    Kaanton        Pe  Gull    Tootay 

Jahaan        Khoon -e -Zameer - e-   Gulsitaan Tak     Baat      Ja    Pahunchi

Muhabbat   Men   Mujhay   Maara   Miri   Zod   Aitbaari   Nay

Yeh    Meri    Saadgi    Thi    Raazdaan    Tak    Baat   Ja   Pahunchi

Hay   Saara    kaarvaan   Be   Raah   Kon   Ab   Uss   Ko   Samjhaaey

Keh   Tanzeem-  e  -Giroh -e-  Rehzanaan     Tak Baat      Ja     Pahunchi

Basad   Tanz  - o -  Haqaarat   Muskuraaey   Un   K   Dewaanay 

Kahen    Jab   Wusat   -e  -  Kon  - o -  Makaan    Tak    Baat    Ja   Pahunchi

Nashaiman    Khaak    Ka    Ik    Dhair    Tha    Lekin    Sahar   Hotay 

Hawaa    Sunki    To     Saaray     Gulsitaan    Tak   Baat    Ja    Pahunchi

Bharen    Gay     Kaya   Na    Bijli    Rooh    Men    Sajday    Jabeenon     K

Keh     Toheen  -e -  Waqaar   -e -  Gulsitaan    Tak     Baat      Ja     Pahunchi

Amal     Meray    Mujhay    EHSAN      Kaya    Jannat    Men    Lay    Jaatay

    Bhalay    Ko    Uss    SHafi   Aaasiaan  Tak     Baat      Ja     Pahunchi

Poet: Ehsan   Danish    

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -