نکلوں جو یہاں سے توبھلا جاؤں کہاں اور | احسان دانش |

نکلوں جو یہاں سے توبھلا جاؤں کہاں اور | احسان دانش |
نکلوں جو یہاں سے توبھلا جاؤں کہاں اور | احسان دانش |

  

نکلوں جو یہاں سے توبھلا جاؤں کہاں اور

اس شہر کے لوگوں کا ہے د ل اور زباں اور

ہے میرے سوا بھی کوئی بیزارِ جہاں اور

آئی ہے کہیں اور سے آواز فغاں اور

اشکوں کی جدائی آب ہے پھولوں کا جد ارنگ

کیا خوب تجلی ہے یہاں اور وہاں اور

مشکل سے نکلتی ہے نظر اوڑھ کے آنسو

ملتی ہے کہاں رخصتِشا فریاد و فغاں اور

ہم اس کے ہوئے تو اسی در کے رہیں گے

ہوتا ہے تو ہونے دو دل و جاں کا زیاں اور

جھنکار سے خوابوں میں شگافوں کے نشاں ہیں

کھلواؤ  یہاں کارگہِ شیشہ گراں اور

کہرام ہے کہرام مگر کون سنے گا

گلچیں کی زبان اور ہے گلشن کی زباں اور

عقبیٰ ہے معاون مرے دنیا کے سفر میں

یہ بوجھ اتاروں تو گزرتا ہے گراں اور

ہنس کر نہ کرو بات مہذب نہیں ماحول

بے رحم زمانے کو گزرتا ہے گراں اور

خوش کن تو سہی ترکِ محبت کاتصور

یہ آگ جو بجھتی ہے تو دیتی ہے دھواں اور

حق بات پہ دانش وہ بگڑتے ہیں تو بگڑیں

اک وہ بھی سہی سینکڑوں دشمن ہیں جہاں اور

شاعر: احسان دانش

(شعری مجموعہ: فصلِ سلاسل، سال اشاعت،1980)

ؓNiklun    Jo    Yahaan    Say    To    Bhala    Jaaun    Kahan    Aor

Iss    Sehr    K    Logon    Ka    Hay    Dil    Aor    Zubaan    Aor

Hay    Meray    Siwa    Bhi    Koi     Bezaar -e -Jahaan    Aor

Aati    Hay    Kahen    Aor    Say    Awaaz -e- Fughaan     Aor

Ashkon    Ki    Juda    Aab   Hay    Pholon    Ka    Juda    Rang

Kaya    Khoob    Tajalli    Hay    Yahaan    Aor    Wahaan    Aor

Mushkill    Say    Nikalti    Hay    Nazar    Aorh    K    Aansu

Milti    Hay    Kahan    Rukhsat   -e-    Faryaad    -o-   Fughaan    Aor

Ham    Uss    K    Huay    Hen    To    Usi    Dar    K      Rahen    Gay

Hota   Hay    To    Honay    Do    Dil    -o-   Jaan   Ka    Zayaan    Aor

Jhankaar     Say   Khaabon    Men     Shagaafon     K     Nishaan    Hen

Khulwaao    Yahaan    Kaar    Gah    -e-     Sheesha    Garaan    Aor

Kohraam    Hay    Kohraam    Magar    Kon    Sunay    Ga

Gullcheen     Ki   Zubaan     Aor     Hay,     Gulshan     Ki     Zubaan    Aor

Uqba    Hay    Muaawan    Miray    Dunya    K    Safar    Men 

Yeh    Bojh    Utaaron    To    Guzarta    Hay   Garaan aor

Hans    Kar    Na    Kro    Baat    Muhazzib    Nahen    Mahol

Be    Rehm    Zamaanay    Ko    Guzarta    Hay    Gumaaan    Aor

Kush    Kun    To    Sahi    Tark   - e-    Muhabbat     Ka    Tasawwar

Yeh     Aag    Jo     Bujhti     Hay    To    Deti    Hay    Dhuaan    Aor

Haq    Baat    Pe    DANISH    Wo    Bigarrtay    Hen    To    Bigrren

Ik    Wo     Bhi       Sahi     Senkarron    Dushman     Hen     Jahaan     Aor

Poet: Ehsan Danish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -