پاسِ ادب ہے اس لیے ہم بولتے نہیں | احسان دانش |

پاسِ ادب ہے اس لیے ہم بولتے نہیں | احسان دانش |
پاسِ ادب ہے اس لیے ہم بولتے نہیں | احسان دانش |

  

پاسِ ادب ہے اس لیے ہم بولتے نہیں

جب بولتے ہیں آپ سے کم بولتے نہیں

اس خاکدانِ دہر کا کچھ ماحصل بھی ہے

کچھ راہروانِ راہِ عدم بولتے نہیں

ہیں جس قدر بھی آپ کے شائستہ نظر

کھا کھا کے دل پہ باوکِ غم بولتے نہیں

آواز دے رہا ہے یہ آذر کدہ سے کون

ہم نے تو یہ سنا تھاکہ صنم بولتے نہیں

انسان چاہتا ہے مداوائے اضطراب

اے ساکنانِ دیر و حرم بولتے نہیں

حائل ہے ہم میں ان میں اک ادنیٰ سا اختلاف

مدت گزر گئی ہے بہم بولتے نہیں

بڑھ بڑھ کے بولتے ہیں کبھی تھے جو کم سواد

جو کھوچکے ہیں غریب بھرم بولتے نہیں

اللہ رے وہ ان کی ندامت جفا کے بعد 

گردن ہے اعتراف میں خم ، بولتے نہیں

گزرے ہیں ایسے لوگ بہت کم نگاہ سے

چہروں پہ جن کے رنج و الم بولتے نہیں

دنیا سمجھ رہی ہے انہیں ہم نے منسلک

جن کے معاملات میں ہم بولتے نہیں

منزل نہ لے سکیں گے کبھی ان کے کارواں

جن رہبروں کے نقشِ قدم بولتے نہیں

ہم کو ہمارے منہ پہ وہ کہتے ہیں بے وفا

احسان، ہم خدا کی قدم بولتے نہیں

شاعر: احسان دانش

(شعری مجموعہ: فصلِ سلاسل، سال اشاعت،1980)

Paas  -e- Adab    Hay    Iss    Liay    Ham     Boltay     Nahen

Jab    Bolyau    Hen    Aap    Say    Kam    Boltay    Nahen

Iss    Khaakdaan -e-Dehr    Ka    Kuch    Maahasl    Bhi    Hay

Kiun    Rahrawaan -e- Raah -e -Adam    Boltay    Nahen

Hen    Jiss    Qadar    Bhi    Aap    K    Shaaista    Nazar

Kha    Kha    K    Dil    Pe    Naavik - e- Gham    Boltay    Nahen

Awaaz    Day    Raha    Hay    Yeh    Aazar    Kadah    Say    Kon

Ham    Nay    To     Yeh    Suna    Tha    Sanam    Boltay   Nahen

Insaan    Chaahta    Hay    Madaawa  -e-  Iztaraab

Ay    Saaknaa -e- Dair  -o-  Haram   ,    Boltay    Nahen

Haail     Hen     Ham     Men     Un    Men    Ik    Adna    Sa    Ekhtalaaf

Muddat    Guzar    Gai    Hay    Baham    Boltay    Nahen

Barrh    Barrh     K    Boltay    Hen    Kabhi    Thay    Jo    kam    Sawaad

Jo    Kho    Chukay   Gharreb    Bharam ,    Boltay    Nahen

Allah ray    Wo    Un   Ki     Nadaamat    Jafa    K    Baad

Gardan     Hay     Aitraaf     Men     Kham  ,     Boltay    Nahen

Guzray     Hen     Aisay    Log     Bahut    Kam     Nigaah    Say

Chehron    Pe    Jin    K    Ranj -o- Alam    Boltay    Nahen

Dunya     Samjh    Rahi    Hay   Unhen    Ham    Say    Munsalik

Jin    K    Muaamlaat    Men     Ham     Boltay    Nahen

Manzill    Na    Lay    Saken     Gay    kabhi    Un     K    Kaarwaan

Jin     Rehbaron    K    Naqsh -e-Qadam     Boltay     Nahen

Ham     Ko     Hamaaray     Munh     Pe    Wo     Kehtay     Hen    Bewafa

EHSAN     Ham     Khuda      Ki    Qasam    Boltay     Nahen

Poet: Ehsan Danish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -