بت ہو کہ خدا میری نظر دونوں طرف ہے | احسان دانش |

بت ہو کہ خدا میری نظر دونوں طرف ہے | احسان دانش |
بت ہو کہ خدا میری نظر دونوں طرف ہے | احسان دانش |

  

بت ہو کہ خدا میری نظر دونوں طرف ہے

شاعر کو روا سجدۂ در دونوں طرف ہے

وہ جلوہ تو کیا مرا جنوں بھی نہیں محفوظ

مشکوک زمانے کی نظر دونوں طرف ہے

بخشی ہے جو تقسیم نے اخلاق کی پستی

وہ پستیِ معیارِ نظر دونوں طرف ہے

بینا ہو اگر دل تو ہیں سب دشت و چمن ایک

آنکھوں کے لیے پردۂ در دونوں طرف ہے

زہرہ کا ترانہ ہو کہ بلبل کا ترنم

وہ نغمہ زن و نغمہ نگر دونوں طرف ہے

پستی ہو ، بلندی ہو ، کسی سمت نکل جا

بے منزل و بے راہ سفر دونوں طرف ہے

جھنجھلائے ہوئے سرخ ستاروں کو سنبھالو

بگڑاہوا اندازِ سحر دونوں طرف ہے

وعدے کا تعین ہو کہ دیدار کی تقریب

ہنگامہ گہِ قلب و نظر دونوں طرف ہے

ہے دیر و حرم ایک ہی منزل کا دو راہہ

رہرو ہوں تو امکانِ خضر دونوں طرف ہے

دنیا میں بھی عقبیٰ میں بھی اے رحمتِ عالم

مخلوق تری دست نگر دونوں طرف ہے

نفرت بھی محبت کا ہے اک پہلوئے روشن

آنکھوں سے تو اوجھل ہے مگر دونوں طرف ہے

میں رہ کے نشیمن میں قفس سے نہیں غافل

صد شکر کہ پروازِسفر دونوں طرف ہے

ہیں شعلہ و گل ایک کوئی دیکھے نہ دیکھے

تنویر بہ مقدارِ نظر دونوں طرف ہے

آزاد ہوئے ، دیر و حرم میں ہے چراغاں

انسان مگرخاک بسردونوں طرف ہے

باہرنہیں خطرے سے قفس ہو کہ گلستاں

اک کشمکشِ برق و شرر دونوں طرف ہے

غم خانۂ احسان ہو یا وادیِ سینا

کوتاہی دامانِ نظر دونوں طرف ہے

شاعر: احسان دانش

(شعری مجموعہ: فصلِ سلاسل، سال اشاعت،1980)

But     Ho     Keh     Khuda ,   Meri    Nazar     Dono    Taraf    Hay

Shaair    Ko    Rawa    Sajda -e- Dar     Dono    Taraf Hay

Wo     Jalwa    To    Kaya    Mera    Junun    Bhi    Nahen    Mefooz

Mashkook    Zamaanay    Ki     Nazar    Dono    Taraf    Hay

Bakhshi     Hay    Jo     Taqseem    Nay    Ekhlaaq    Ki     Pasti

Wo    Pasti -e-  Mayaar -e- Bashar     Dono    Taraf    Hay

Beena     Ho    Agar     Dil     To    Hen    Sab    Dasht  -o-  Chaman     Aik

Aankhon     K     Liay     Parda  -e-  Dar     Dono    Taraf    Hay

Zohra     Ka    Taraana     Ho     Keh       Bulbul    Ka    Tarannum

Wo     Nagham     Zan  -o -  Naghma     Nagar     Dono     Taraf     Hay

Pasti    Ho  ,   Bulandi     Ho  ,   Kisi     Samt     Nikal Ja

Be    Manzil -o -  Be     Raah    Safar    Dono     Taraf    Hay

Jahnjhulaaey    Huay     Surkh     Sitaaron     Ko     Sanbhaalo

Bigraa      Hua      Andaaz - e - Safar     Dono     Taraf     Hay

Waaday     Ka    Tayyun     Ho     Keh    Dedaar   Ki    Taqreeb

Hangaama     Ggah  -e - Qalb  -o-  Nazr      Dono    Taraf     Hay

Hay     Dair -o-Haram      Aik     Hi     Manzil     Ka     Doraha

Rahro     Hon     To     Imkaan  -e-  Khizar     Dono     Taraf     Hay

Dunya     Men      Bhi     Uqba     Men     Bhi    Ay    REHMAT  -E - AALAM

Makhlooq     Tiri     Dastt  -e-   Nagar    Dono     Taraf     Hay

Nafrat     Bhi     Muhabbat     Ka     Hay    Ik    Pehlu  -e-   Roshan

Aankhon     Say     To     Ojhal     Hay    Magar  Dono     Taraf     Hay

Main     Reh     K     Nashaiman     Men     Qafas     Say     Nahen     Ghaafil

Sad     Shukr     Keh     Parwaaz  -e - Nazar     Dono      Taraf     Hay

Hen Shola -o- Gull Aik Koi Dekhay Na Dekhay

Nazar     Tanveer      Bamiqaadr -e -  Nazar      Dono     Taraf     Hay

Azaad Huay , Dair -o-  Haram      Men      Hen      Charaghaan

Isaan     Magar     Khaak     Basar     Dono     Taraf     Hay

Baahar        Nahen     Khatray     Say     Qafas     Ho     Keh     Gulistaan

Ik    Kashmakash   -e-   Barq  -o-   Sharar     Dono     Taraf     Hay

Gham     Khaana -e-  EHSAN     Ho     Ya     Waadi-e- Seena

Kohtaahi  -  e-   Damaan   -e-    Nazr     Dono     Taraf     Hay

Poet: Ehsan Danish

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -