ہیومن رائٹس واچ کو اسرائیلی مظالم نظر نہ آئے ۔ ۔ ۔

ہیومن رائٹس واچ کو اسرائیلی مظالم نظر نہ آئے ۔ ۔ ۔
ہیومن رائٹس واچ کو اسرائیلی مظالم نظر نہ آئے ۔ ۔ ۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لندن (بیورورپورٹ) انسانی حقوق کی امریکی تنظیم ہیومن رائٹس واچ (ایچ آر ڈبلیو) نے غزہ میں حماس کی حکومت پر اسرائیل کے لیے جاسوسی کے سات ملزمان کی ہلاکت کی تحقیقات میں ناکامی کا الزام عائد کیا ہے۔ برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق ہیومن رائٹس واچ کا کہنا ہے کہ ان ہلاکتوں کی تحقیقات کا جو وعدہ کیا گیا تھا وہ پورا نہیں ہوا ہے تاہم حماس نے اس کی تردید کی ہے۔ ایچ آر ڈبلیو کی مشرقِ وسطیٰ کی ڈائریکٹر سارہ لی ویٹسن کا کہنا ہے کہ حماس کی حکومت پر اسرائیل کے لیے جاسوسی کے سات ملزمان کی ہلاکت کی تحقیقات میں ناکامی اس کے دعویٰ کی تردید کرتی ہے کہ غزہ میں قانون کی حکمرانی ہے۔ دوسری جانب حماس کے ترجمان نے ایچ آر ڈبلیو کے الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس واقعہ کے بعد پراسیکیوٹر جنرل کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی تھی اور وہ پہلے ہی حماس کو اپنی سفارشات پیش کر چکی ہے خیال رہے کہ اس واقعہ کے بعد حماس کے اس وقت کے نائب رہنما موسی ابو مارزوک نے ان ہلاکتوں کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے اعلان کیا تھا کہ اس جرم میں ملوث افراد کو سزا دی جائے گی۔ یہ واقعہ گزشتہ برس نومبر میں حماس اور اسرائیل کی آٹھ روزہ جنگ کے دوران پیش آیا تھا اور ان افراد کو سرِعام گولی مار دی گئی تھی۔