بچوں سے جبری مشقت کے خاتمے کا تہیہ کر رکھا ہے،راجہ اشفاق سرور

بچوں سے جبری مشقت کے خاتمے کا تہیہ کر رکھا ہے،راجہ اشفاق سرور

  



لاہور(خبرنگار) صوبائی وزیر محنت وانسانی وسائل راجہ اشفاق سرور نے کہا ہے کہ حکومت پنجاب نے صوبہ بھر کے صنعتی و کمرشل اداروں ، دکانوں، ہوٹلوں و دیگر مقامات سے 14 سال سے کم عمر بچوں سے مشقت کی لعنت کے خاتمے کا تہیہ کررکھا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ حکومتی کوششوں سے بھٹہ خشت سے چائلڈ لیبر کا تقریباً خاتمہ ہو چکا ہے۔ محکمہ لیبر کے افسران سالانہ ترقیاتی پروگرام کے تحت جاری سکیموں کی تکمیل پر بھرپور توجہ دیں اور چائلڈ لیبر و جبری مشقت کے خاتمے کے جاری منصوبوں کو اولین ترجیح دیتے ہوئے یکساں سوچ اور لائحہ عمل اپنائیں۔ان خیالات کا اظہار صوبائی وزیر محنت و انسانی وسائل نے محکمہ لیبر وانسانی وسائل کے سالانہ ترقیاتی پروگرام کے تحت جاری سکیموں پر پیش رفت کے حوالے سے منعقدہ جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ سیکرٹری لیبر نوازش علی کھوکھر، ڈائریکٹر ہیڈ کوارٹر لیبر داؤد عبداللہ، پراجیکٹس ڈائریکٹر زریحان نبی ، ارشد محمود اور ملک نذیر کے علاوہ محکمہ محنت کے دیگرمتعلقہ افسران نے اجلاس میں شرکت کی۔ ڈائریکٹر ہیڈکوارٹر داؤد عبداللہ نے اجلاس کو سالانہ ترقیاتی پروگرام کے تحت جاری مختلف سکیموں پر کام کر رفتار کے حوالے سے بریفنگ دی۔ داؤد عبداللہ نے اجلاس کو بتایا کہ چائلڈ لیبر وجبری مشقت کے خاتمے اور صوبہ پنجاب کے غریب اور نادر مزدوروں کے لئے ڈیسنٹ ورک کے فروغ کے حوالے سے مربوط منصوبہ 5159.629 ملین روپے کی لاگت سے 10 اضلاع میں جاری ہے۔ جس کا دائرہ کار آئندہ سال اگلے 10اضلاع تک بڑھا دیا جائے گا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1