گلوبل کنیکٹویٹی انڈیکس کی 50 ممالک کی فہرست میں پاکستان کا آخری نمبر

گلوبل کنیکٹویٹی انڈیکس کی 50 ممالک کی فہرست میں پاکستان کا آخری نمبر
گلوبل کنیکٹویٹی انڈیکس کی 50 ممالک کی فہرست میں پاکستان کا آخری نمبر

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) موجودہ دور انٹرنیٹ کا دور ہے۔ تفریح سے لے کر تعلیم و تربیت اور کاروبار تک اس جدید ٹیکنالوجی پر منحصر ہیں، اور یہ ٹیکنالوجی آج کی جدید معیشتوں کو آگے بڑھانے کے لئے انجن کا کردار ادا کررہی ہے۔ کسی ملک میں انٹرنیٹ کی دستیابی اور استعمال کی شرح اس کے ترقی کی طرف سفر کی آئینہ دار ہے۔ بین الاقوامی ٹیکنالوجی کمپنی ہواوے ہر سال گلوبل کنیکٹویٹی انڈیکس رپورٹ شائع کرتی ہے جس میں ممالک کی انٹرنیٹ فراہمی کے حوالے سے درجہ بندی کی جاتی ہے۔ ہم انٹرنیٹ سے کس حد تک منسلک ہیں، اس کا اندازہ اس رپورٹ میں ہماری پوزیشن سے لگایا جاسکتا ہے۔ ویب سائٹ ٹیک جوس کی رپورٹ کے مطابق گلوبل کنیکٹویٹی انڈیکس 2016ء کی 50 ممالک کی فہرست میں پاکستان کا نمبر آخری ہے۔ فہرست میں پہلے نمبر پر ایک دفعہ پھر امریکا ہے، جبکہ سنگاپور دوسرے اور سویڈن تیسرے نمبر پر ہے۔ جدید انٹرنیٹ ٹیکنالوجی کی فراہمی اور استعمال میں بنگلہ دیش ہم سے ایک نمبر آگے ہے، اس کی پوزیشن 49ہے، جبکہ ہمارا ہمسایہ بھارت 44 ویں نمبر پر ہے۔ اگرچہ پاکستان میں 3G اور 4G ٹیکنالوجی کے استعمال کا رجحان بڑھ رہا ہے لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ اس کے باوجود ہماری کمزور ترین پوزیشن کی وجہ غالباً یہ ہے کہ ہمارے ہاں 3G موبائل نیٹ ورک اور 4G سپیکٹرم بہت تاخیر سے متعارف کروائے گئے ہیں۔ یہ رپورٹ ظاہر کرتی ہے کہ عوام کو سستا اور تیز رفتار انٹرنیٹ فراہم کرنے کے لئے سنجیدہ کوششوں کی ضرورت ہے، تاکہ وطن عزیر کی ترقی کے لئے جدید ٹیکنالوجی سے بھرپور استفادہ ممکن ہو سکے۔

مزید : صفحہ آخر


loading...