برطانیہ کے ساتھ تجارتی تعلقات کا فروغ خارجہ پالیسی کا حصہ ہونا چاہیے، لاہور چیمبر

برطانیہ کے ساتھ تجارتی تعلقات کا فروغ خارجہ پالیسی کا حصہ ہونا چاہیے، لاہور ...

  

لاہور(کامرس رپورٹر) برطانیہ کے ساتھ تجارتی و معاشی تعلقات کا فروغ پاکستان کی خارجہ پالیسی کا اہم حصہ ہونا چاہیے کیونکہ یہ ملک برآمدات بڑھانے کے حوالے سے پاکستان کے لیے انتہائی بہترین جگہ ثابت ہوسکتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار لاہور چیمبر کے صدر ملک طاہر جاوید، سینئر نائب صدر خواجہ خاور رشید، ، سٹینڈنگ کمیٹی برائے پاک یوکے بزنس پروموشن کی کنوینر نبیلہ انتصار، میاں انجم نثار و دیگر ماہرین نے لاہور چیمبر میں پاک یوکے بزنس آئیڈیاز کے موضوع پر سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ دیگر ماہرین میں عظمیٰ نواز، وقار اللہ، ساجد سلیم منہاس، اسد الرحمن اور آغا سیدین نے بھی اس موقع پر خطاب کیا۔ لاہور چیمبر کے صدر ملک طاہر جاوید نے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان مضبوط دیرینہ تعلقات ہیں ، پاکستانی تاجروں کو برطانوی تاجروں کے ساتھ تعلقات مستحکم کرکے برطانیہ کے تجربے اور وہاں موجود مواقع سے بھرپور فائدہ اٹھانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ تجارتی وفود کا تبادلہ اور ایک دوسرے کی نمائشوں میں شرکت ایک دوسرے کو جاننے اور فائدہ اٹھانے کا بہترین ذریعہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ پاکستان کے لیے پانچ بڑی برآمدی منڈیوں میں سے ایک ہے، پاکستانی برآمدات اور درآمدات کے حوالے سے برطانیہ تیسرے اور سولہویں نمبر پر ہے ، تھوڑی سی کوششوں سے برطانیہ پاکستان کے لیے مزید فائدہ مند ثابت ہوسکتا ہے۔ انہوں نے شرکاء کو بتایا کہ لاہور چیمبر تاجروں کے مسائل حل کرنے کے لیے انتھک کوششیں کررہا ہے۔

، چین کے ساتھ فری ٹریڈ ایگریمنٹ کا دوسرا مرحلہ لاہور چیمبر کے مطالبے پر روکا گیا۔ خواجہ خاور رشید نے کہا کہ برطانیہ پاکستان کو تجارتی سہولیات مہیا کرے، موجودہ تجارتی حجم بڑھانے کے لیے دونوں ممالک کے تاجروں کو اہم کردار ادا کرنا ہوگا۔ نبیلہ انتصار نے کہا کہ سیمینار کے انعقاد کا مقصد تاجروں کو برطانیہ اور پاکستان میں موجود پوٹینشل، تجارت و سرمایہ کاری کے مواقعوں سے آگاہ کرنا تھا۔ میاں انجم نثار نے کہا کہ پاکستان کی برطانیہ کو برآمدات کا حجم ڈیڑھ ارب ڈالر ہے اور یہ پاکستان کے لیے تیسری بڑی برآمدی منڈی ہے، سو سے زائد برطانوی کمپنیاں پاکستان میں کام کررہی ہیں، جی ایس پی پلس سٹیٹس کے حصول میں بھی برطانیہ نے گرانقدر تعاون کیا۔ وقار اللہ نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت بڑھانے کے لیے تجارتی معلومات کے تبادلے پر خاص توجہ دی جائے۔

مزید :

کامرس -