پی ٹی سی ایل گروپ کی پہلی سہ ماہی میں 30بلین روپے کی آمدنی

پی ٹی سی ایل گروپ کی پہلی سہ ماہی میں 30بلین روپے کی آمدنی

ملتان (پ ر )ملک میں ICTخدمات کی معروف فراہم کنندہ پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن کمپنی لمیٹڈ (پی ٹی سی ایل) کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا اجلاس آج اسلام آباد میں منعقد ہوا۔(بقیہ نمبر17صفحہ12پر )

اجلاس کی کار وائی میں 31 مارچ 2018ء کو ختم ہونے والی سال کی پہلی سہ ماہی کے مالیاتی نتائج کا اعلان کیا گیا۔ گروپ کمپنیوں کی مجموعی طور پر مثبت کارکردگی کی وجہ سے پی ٹی سی ایل کے گروپ کی آمدنی 2018 ء کی پہلی سہ ماہی میں YoY 4 فیصد بڑھ کر 30 بلین روپے تک جا پہنچی۔ 2017 ء میں کمی کی شرح کے بعد 2018 ء کی پہلی سہ ماہی میں 2014ء کی دوسری سہ ماہی کے بعد پہلی مرتبہ17.5 بلین روپے کی ترقی حاصل کی گئی اور گزشتہ سال کی اسی سہ ماہی کے مقابلے میں1فیصدزیادہ آمدنی حاصل کی۔یو فون کی آمدنی نے سیلولر فون کی مارکیٹ میں زبردست مسابقت کے باوجود4فیصدYoYترقی کی ۔ پی ٹی سی ایل مائیکرو فنانسنگ کے ایک ذیلی ادارے یو بینک نے شاندارترقی کی اور سال 2017 ء کی پہلی سہ ماہی کے مقابلے میں دگنی آمدنی حاصل کی۔پی ٹی سی ایل گروپ کا آپریٹنگ پرافٹ عام طور پر اس سہ ماہی میں سال 2017 ء کی پہلی سہ ماہی کے مقابلے میں27فیصد زائدرہاجسے ایک دفعہ ہونیوالے اثرات پہ normalize کیا گیا۔ پی ٹی سی ایل گروپ کی آمدنی حتمی طور پر10 فیصد کمی کا شکار ہوئی اور1بلین روپے تک پہنچی جس کی وجہ روپے کی قدر میں کمی تھی۔ یہ ترقی 28فیصد زیادہ ہوتی جسے فاریکس او ردیگر اثرات کے ساتھ ایڈجسٹ کیا گیا۔ پی ٹی سی ایل کی نمایا ں اور مارکیٹ کی معروف فکسڈ براڈبینڈDSLسروس نے اس ترقی کو جاری رکھااور2017 ء کی پہلی سہ ماہی کے مقابلے میں 9فیصد زیادہ ترقی کی۔چارجی/ LTE میں گزشتہ برس کی جانے والی سرمایہ کاری نے اس سال مثبت نتائج دکھائے اوردوہرے ہندسوں میں YoY ترقی کی ۔ کارپوریٹ بزنس نے گزشتہ سال کی پہلی سہ ماہی کے مقابلے میں 17 فیصد زائد نمایاں ترقی کی۔تاہم ملکی و بین الاقوامی وائس کی آمدنی میں کمی آئی جس کی وجہ OTT اور سیلولر سروسز کا حصول تھا جس کے نتیجے میں وائس ٹریفک میں کمی ہوئی۔پی ٹی سی ایل کا آپریٹنگ اور خالص منافع 3 فیصد کم رہا اور14 فیصد گزشتہ سال کے مقابلے میں کم رہا جس کی مرکزی وجہ سال کے شروع میں صارفین کو حاصل کرنے کی لاگت اور مارکیٹنگ پر ہونے والے زائد اخراجات تھے اور نان آپریٹنگ آمدنی میں کمی تھی جس کی وجہ فنڈز میں کمی VSS اور CAPEX میں بالترتیب گزشتہ سال کے مقابلے میں سرمایہ کاری میں کمی تھی۔ سال 2018 ء میں پی ٹی سی ایل نے اپنے جامع نیٹ ور ک میں تبدیلی کے منصوبوں کو جاری رکھتے ہوئے ملک کے مختلف حصوں میں بہت سی ایکس چینجز کو یکسرطورپربہتر کیا۔ صارفین کو معیاری اور تیز ترین انٹرنیٹ فراہم کرنے کے لئےEVO کی جگہ CharJi LTE متعارف کرائی گئی ۔پی ٹی سی ایل نے نیٹ فلکس کے ساتھ بھی شراکت داری کی جو کہ دنیا کا سب سے زیادہ سٹریمنگ مواد فراہم کرتاہے۔ تاکہ صارفین کو بین الاقوامی اور معیاری مواد تک رسائی فراہم کرکے اس کو دیکھے جانے والے تجربے کو مزید بہتر کیا جاسکے۔ پی ٹی سی ایل نے نئے کلاؤڈ انفراسٹرکچر سروسز اور رابطوں کی سروسز کے معاہدوں پر دستخط کیے اپنے انٹر پرائزاینڈ کلاؤڈ سروسز پورٹ فولیو میں مزید بہتری لانے کے لیے پی ٹی سی ایل نے عالمی آئی ٹی کمپنیوں کے ساتھ ری سیلرز معاہدوں پر دستخط کیے ۔ پی ٹی سی ایل اور ٹیلی نار پاکستان مسلسل تیسرے سال کے لئے،فائبر لیزنگ معاہدے میں داخل ہو چکے ہیں۔ جس کے تحت پی ٹی سی ایل ٹیلی نار پاکستان کو2018کے لیے فائبر فٹ پرنٹ فراہم کرے گا ۔پی ٹی سی ایل کی بین الاقوامی ٹیم نے افغانی اور بحرینی آپریٹرز کی گرافت سے اعلیٰ معیارSTM16سرکٹ کو بھی جیتا ہے۔ جس سے پی ٹی سی ایل کوقابلِ قدر فائدہ ہوا اور وہ نمایاں طور پر سب سے آگے رہا ۔ برانڈ کو آگے بڑھانے اور قومی کھیلوں کو فروغ دینے اور ایک قومی کمپنی کے ہونے کے ناطے اپنا کردارادا کرنے کے لئے پی ٹی سی ایل نے2018 ء ہا کی کپ، دورہِ نیوزی لینڈ میں پاکستان T20 اور پی ایس ایل تھری میں اسلام آباد یونائیٹڈکی ٹیم کو اسپانسر کیا ۔ برانڈکے مقتدرہ ادارے نے اعلان کیا کہ پی ٹی سی ایل پاکستان میں سب سے تیزی سے بڑھتا ہوا برانڈہے۔ جس کے برانڈ کی قدر 12.5 بلین سے زائدہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر