محکمہ پولیس میں پولیس آرڈر 2002ء پر عملدرآمد نہ ہوسکا،سعدیہ سہیل

محکمہ پولیس میں پولیس آرڈر 2002ء پر عملدرآمد نہ ہوسکا،سعدیہ سہیل

لاہور(لیڈی رپورٹر ) پاکستان تحریک انصاف کی رکن پنجاب اسمبلی سعدیہ سہیل رانا نے ایک تحریک التوائے کار پنجاب اسمبلی میں جمع کروا دی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ نجی اخبار کی خبر کے مطابق محکمہ پولیس میں پولیس آرڈر 2002ء پر عملدرآمد نہ ہوسکا، ایس ایچ اوز کی تعیناتی میں بڑے پیمانے پر قانون اور ضابطہ کو پس پشت ڈال دیا گیا، پولیس کلچر میں تبدیلی خواب بن گیا، کرپشن بڑھ گئی ،کرائم میں 60 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ نجی اخبار کو محکمہ پولیس کے ذرائع نے بتایا کہ پولیس آرڈر2002ء پر عملدرآمد اور پولیس کلچر میں تبدیلی کے حوالے سے خفیہ اداروں نے ایک رپورٹ تیار کی ہے جو ہ وزیر اعلیٰ پنجاب کو پیش کی گئی ہے، رپورٹ میں اس بات کا ذکر کیا گیا ہے کہ لاہور سمیت پنجاب بھر کے تھانوں میں پولیس ایس ایچ اوز کی تعیناتی میں قواعد و ضوابط کو نظر انداز کیا جارہا ہے، بالخصوص لاہور کے 86 تھانوں میں سے 62 تھانوں میں وزراء ، ارکان اسمبلی، اعلیٰ پولیس افسروں اور بیورو کریٹس کے قریبی عزیز و اقارب اور ان سے تعلق رکھنے والے انسپکٹرز اور سب انسپکٹرز کو ایس ایچ اوز تعینات کیا گیا اور پولیس آرڈر 2002ء کی کھلم کھلی خلاف ورزی کی جارہی ہے جس سے پولیس کلچر کی تبدیلی کا عمل نا ممکن بن کر رہ گیا ہے، ا یہی وجہ ہے کہ کرپشن نے جنم لیا ہے، اور اس سے کرائم کی شرح میں 60 سے 65 فیصد اضافہ ہوا ہے جس سے امن و امان کی ناقص صورتحال بالخصوص ڈکیتی اورسٹریٹ کرائم جیسے سنگین واقعات میں حیرت انگیز حد تک اضافہ ہواہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1