ایوانِ صدرمیں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کے بورڈ آف ٹرسٹیز کا تیرھواں اجلاس

ایوانِ صدرمیں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کے بورڈ آف ٹرسٹیز کا تیرھواں ...

اسلام آباد(صباح نیوز) صدرِ مملکت ممنون حسین کی زیر صدارت ایوانِ صدرمیں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد کا بورڈ آف ٹرسٹیز کا تیرھواں اجلاس منعقد ہوا۔ اجلاس میں بورڈ آف ٹرسٹیز کی خالی نشست کے لیے سوڈان کے سابق صدرعبدالرحمن سوار الذھاب کو رکنیت دینے کی تجویز کی منظور ی دی گئی ۔اجلا س میں شرکت کرنے والے اراکین کا تعلق پاکستان، سعودی عرب، مراکش، مصر، کویت اور دیگر کئی اسلامی ممالک سے تھا۔ اجلاس میں یونیورسٹی کے انتظامی امور سے متعلق اہم فیصلے بھی کئے گئے۔ صدرِ مملکت ممنون حسین نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی نے وطن عزیز کو درپیش چیلنجوں سے نمٹنے کے سلسلے میں دانش ورانہ سطح پر ریاست کی قابل قدر معاونت کی ہے ۔ انتہا پسندی کی وجوہات کو سمجھنے اور ان سے نمٹنے کے سلسلے میں اس جامعہ کے زیر اہتمام علمائے کرام کا فتوی ’پیغام پاکستان ‘ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ قیامِ پاکستان کے بعد علماکی طرف سے آنے والی یہ اہم ترین دستاویز ہے ۔ صدرِ مملکت نے کہا کہ جامعات اور تحقیقی ادارے انسانیت کودرپیش مسائل کو سمجھنے اور انہیں حل کرنے کے سلسلے میں غیر معمولی اہمیت رکھتے ہیں اور ان کا معاشرے کی سیاسی ، معاشی اور سماجی ترقی میں بھی اہم کردار ہوتا ہے۔

ان معاملات میں بین الاقوامی یونیورسٹی اسلام آباد کی خدمات قابل قدر ہیں ۔ صدر مملکت نے اس ا مر پر مسرت کا اظہار کیا کہ اسلامی یونیورسٹی کے تعلیمی اور انتظامی امور کی نگرانی کے لیے بورڈ آف ٹرسٹیز کا اجلاس انتہائی باقاعدگی سے منعقد کیا جا رہا ہے جس سے یونیورسٹی کے معاملات میں بہتری آئے گی، یونیورسٹی عالم اسلام کے ممتاز علما اور دانشور وں کے علم اور تجربے سے استفادہ کر سکے گی۔ صدر مملکت نے مزید کہا کہ اسلامی یونیورسٹی اسلامی امہ کی علامت ہے اس لئے اس کے معاملات بہتر انداز میں چلنے چاہئیں۔ اس موقع پر الازہر یونیورسٹی کے صدر ڈاکٹر یوسف عمر اورمفتی اعظم مصر کے نمائندے ڈاکٹر عباس عبداللہ نے کہا کہ ان کا ملک انتہا پسندی کے خلاف پاکستانی علما کے فتوے کی قدر کرتا ہے اور اس کا تین زبانوں میں ترجمہ کر کے اسے دنیا کے دیگر حصوں میں بھی متعارف کرارہا ہے۔ انھوں نے حکومت مصر کی طرف سے پاکستانی طلبہ کے لیے اسکالر شپس کی پیشکش بھی کی۔ بورڈ آف ٹرسٹیز کے اجلاس میں ریکٹر ڈاکٹر معصوم یسین زئی ، پروفیسر ڈاکٹر احمد یوسف الدرویش، ہائر ایجوکیشن کمیشن کے چیئرمین ڈاکٹر مختار احمد، اسلامک ایجوکیشنل سائنٹیفک اینڈ کلچرل آرگنائزیشن مراکش کے سربراہ ڈاکٹر عبدالعزیز بن عثمان التویجری ، قاہرہ یونیورسٹی کے صدر پروفیسر محمد عثمان الخوشت، اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز، اسلامی ترقیاتی بینک کے سابق سربراہ ڈاکٹر احمد محمد علی، فیڈرل پبلک سروس کمیشن کے رکن احمد فاروق، جسٹس ریٹائرڈ خلیل الرحمن خان، وفاقی شرعی عدالت کے سینئرجج جسٹس ڈاکٹر فدا محمد خان، کویت کے ڈاکٹرعثمان یوسف جاسم الحاجی، سابق سینیٹر روزینہ عالم، اسلامی نظریاتی کونسل کے سابق چیئرمین ڈاکٹر خالد مسعود، سعودی عرب کے شیخ حمود بن عبداللہ الثیب، کویت کے ڈاکٹر محمد اسید عبدالرزاق الطباطبائی، جامعہ الازہر کے مفتی اعظم کے نمائندے ڈاکٹر عباس عبداللہ سلیمان، جامعہ الازہر کے صدر ڈاکٹر یوسف السید یوسف امیر، صدرمملکت کے سیکریٹری شاہد خان اور سیکریٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ سمیت دیگر اعلی حکام نے شرکت کی۔

اسلامی یونیورسٹی

مزید : علاقائی