پی آئی اے کو برباد کرنیوالے غدار ہیں:چیف جسٹس،گزشتہ 10سال میں ایم ڈی رہنے والوں کے بیرون ملک جانے پر پابندی ،چیف جسٹس نے ٹیکس ایمنسٹی سکیم کے جائزے کا بھی عندیہ دیدیا

پی آئی اے کو برباد کرنیوالے غدار ہیں:چیف جسٹس،گزشتہ 10سال میں ایم ڈی رہنے ...

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر ،مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوز ایجنسیاں) چیف جسٹس پاکستان نے پی آئی اے کے 2008 سے 2018 تک کے مینیجنگ ڈائریکٹرز کو بیرون ملک جانے سے روک دیا جب کہ ان کی روانگی عدالتی اجازت سے مشروط کردی ہے۔چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے پی آئی اے کی نجکاری اور آڈٹ سے متعلق ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی۔سماعت کے دوران پی آئی اے کے وکیل نے 9 سال کا آڈٹ ریکارڈ عدالت میں پیش کیا۔یاد رہے کہ مذکورہ کیس کی 6 اپریل کو ہونے والی گذشتہ سماعت پر چیف جسٹس نے پی آئی اے کے مینیجنگ ڈائریکٹر سے ادارے کی 10 سالہ آڈٹ رپورٹ طلب کرتے ہوئے انہیں ذاتی حیثیت میں طلب کیا تھا۔ گزشتہ روز سماعت کے دوران چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ 'مارکیٹ میں پی آئی اے کے شیئرز کی قیمت کیا ہے؟'وکیل پی آئی اے نے آگاہ کیا کہ اس وقت مارکیٹ میں پی آئی اے کی فی شیئر قیمت 5 روپے ہے۔ چیف جسٹس نے وکیل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ 'ہمیں اب تک ہونے والے نقصانات سے آگاہ کریں'۔وکیل پی آئی اے نے عدالت عظمیٰ کو آگاہ کیا کہ 2013 میں پی آئی اے کو لگ بھگ 44 ارب روپے، 2014 میں 37 ارب روپے، 2015 میں 32 ارب روپے، 2016 میں 45 ارب روپے اور 2017 میں 44 ارب روپیکا نقصان ہوا۔چیف جسٹس نے پی آئی اے کے سابق ایم ڈیز کو مخاطب کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ 'آپ لوگوں نے ظلم کیا، اتنا بڑا اثاثہ برباد کردیا، پی آئی اے کو برباد کرنے والے دشمن اور غدار ہیں'۔جسٹس ثاقب نثار نے مزید کہا کہ 'اس نقصان کے ذمہ داروں کے خلاف کارروائی ہوگی اور ہم انہیں کسی طور نہیں چھوڑیں گے'۔ساتھ ہی چیف جسٹس نے کہا کہ 'پی آئی اے کے وہ تمام ایم ڈیز عدالت آجائیں جن کے ادوار میں نقصان ہوا'۔جسٹس ثاقب نثار نے پہلے حکم دیا کہ 'پی آئی اے کے 2008 سے 2018 تک کے ایم ڈیز کے نام ای سی ایل میں ڈالے جائیں، ہم ایک کمیشن بنا رہے ہیں تاکہ معاملے کی تحقیقات ہو'۔سپریم کورٹ نے ماہر معاشیات ڈاکٹر فرخ سلیم کو عدالتی معاون مقرر کردیا اور قومی ائیر لائن کے خسارے کی انکوائری کے لیے انہیں ٹی او آر بنانے کی بھی ہدایت کی، چیف جسٹس نے فرخ سلیم سے مکالمہ کیا کہ 'اس بات کا تعین کریں کس کے ادوار میں نقصان ہوا، ہم آپ سے جاننا چاہتے ہیں نقصان کا ذمہ دارکون ہے'؟اس پر فرخ نسیم نے بتایا کہ پی آئی اے کو 2002 میں ایک ارب 8 کروڑ روپے کا منافع ہوا تھا، 2002کے بعد سے پی آئی اے خسارے میں ہے۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ 'ہمیں وجوہات کاپتہ چلناچا ہییکس وجہ سیخسارہ ہوا، کتنے عرصے تک ٹیکس دینے والے پی ا?ئی اے کا خرچ برداشت کرتے رہیں گے'؟دوران سماعت چیف جسٹس نے کہا کہ 'انکوائری ہونے تک کوئی ایم ڈی بیرون ملک نہیں جائے گا، ہم ا?پ کے نام ای سی ایل میں نہیں ڈال رہے'۔عدالت نے تمام ایم ڈیز کو ہر سماعت پر حاضر ہونے کی ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ بیرون ملک جانا بھی ہو تو عدالت سے اجازت لینا ہو گی۔اس موقع پر اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ فی الوقت حکومت کاپی آئی اے کی نجکاری کا ارادہ نہیں، نجکاری کی ضرورت پیش آئی توعدالت کو اعتماد میں لیا جائے گا۔جسٹس اعجاز الاحسن نے پی ا?ئی اے کے وکیل سے استفسار کیا کہ '360 ارب روپے خسارے کے ساتھ کون لے گا پی آئی اے'؟چیف جسٹس نے سوال کیا کہ 'پی آئی ایکے نفع بخش روٹس کسے بیچے گئے'؟ پی ا?ئی اے کے وکیل نے بتایا کہ قومی ائیرلائن کے روٹس بیچنے کا کوئی تصور نہیں ہے۔ جسٹس اعجاز نے کہا کہ 'لینڈنگ رائٹس دیئے جاتے ہیں جس کے پیسے لیے جاتے ہیں'۔معزز چیف جسٹس نے پی آئی اے کے وکیل سے سوال کیا کہ 'نیویارک کا روٹ کیوں بندکردیا گیا'؟ جس پر انہیں بتایا گیا کہ نیویارک کے روٹ پر نقصان ہورہا تھا۔اس پر جسٹس اعجاز نے کہا کہ 'متعدد ائیر لائنز نیویارک کے روٹ پر کماتی ہیں'، قومی ائیرلائنکے وکیل نے دلائل میں کہا کہ نیویارک فلائٹ بند ہونے سے ایک ارب روپے خسارہ کم ہوا، روٹ بند کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ روٹ بیچ دیا گیا۔چیف جسٹس پاکستان نے پی آئی اے کے وکیل سے پوچھا کہ 'اس کیس کے لیے آپ پی آئی اے سے کتنے پیسے لے رہے ہیں'؟ انہوں نے بتایا کہ میں 15 لاکھ روپے لے رہا ہوں۔جسٹس ثاقب نثار نے پوچھا 'کس نے آپ کو وکیل مقرر کیا'؟ پی آئی اے کے وکیل نے بتایا کہ مجھے پی آئی اے بورڈ نے مقرر کیا اور خود سے متعلق وضاحت کے لیے تیار ہوں۔چیف جسٹس نے قومی ائیر لائن کے وکیل سے مکالمہ کیا کہ 'اپنا وکیل بھی مقرر کرلیں'۔بعد ازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت دو ہفتوں کے لیے ملتوی کردی۔

چیف جسٹس

اسلام آباد (ستاف رپورٹر ) چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے حکومت کی جانب سے اعلان کردہ حالیہ ٹیکس ایمنسٹی اسکیم کے جائزے کا عندیہ دیا ہے۔سپریم کورٹ میں سرکاری زمین کی ملکیت سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ ایمنسٹی اسکیم کو دیکھیں گے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ سرکار کے اثاثوں کو ایسے نہیں جانے دیں گے، پاکستانیوں کے بیرون ملک اثاثوں کا کیس جلد سماعت کے لیے مقرر کریں گے۔چیف جسٹس نے کہا کہ بیرون ملک اکاؤنٹس اور اثاثوں پر سخت ایکشن لیں گے اور اس کیس کو سماعت کے لئے مقرر کیا جائے۔دریں اثنا: چیف جسٹس نے چیچہ وطنی میں 8 سالہ بچی سے زیادتی اور قتل کا از خود نوٹس لے لیا۔۔سپریم کورٹ کے اعلامیے کیمطابق چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے چیچہ وطنی میں 8 سالہ بچی سے زیادتی اور قتل کا از خود نوٹس لے لیا اور آئی جی پنجاب سے 24 گھنٹوں میں رپورٹ طلب کرلی ہے۔اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ چیف جسٹس نے نوٹس میڈیا رپورٹس پر لیا، میڈیا رپورٹس کے مطابق بچی نور فاطمہ کو زیادتی کے بعد زندہ جلا دیا گیا تھا جب کہ بچی کے خاندان اور علاقہ مکینوں نے چیف جسٹس سیمعاملے کا نوٹس لینے کی اپیل کی تھی۔

نوٹس

مزید : کراچی صفحہ اول