بدعنوانیوں کی نشاندہی سے متعلق تحریک التوا خلاف ضابطہ قرار

بدعنوانیوں کی نشاندہی سے متعلق تحریک التوا خلاف ضابطہ قرار

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) سندھ اسمبلی میں جمعرات کو پی ٹی آئی کے رکن خرم شیر زمان کی آڈیٹر جنرل رپورٹ پر بدعنوانیوں کی نشاندہی سے متعلق تحریک التوا خلاف ضابطہ قرار دیکر مسترد کردی گئی۔محرک کا کہنا تھا کہ آڈیٹر جنرل نے اپنی رپورٹ میں محکمہ زراعت اور سپلائی پرائسز میں بدعنوانیوں کی نشاندہی کی ہے۔سینئر وزیر پارلیمانی امور نثار کھوڑو نے تحریک التواء کی مخالفت کی اور ان کا کہنا تھا کہ تحریک التواء کے ساتھ کوئی ثبوت نہیں دیا گیا۔اس موقع پرخرم شیرزمان اور اسپیکر اور سینئر وزیر کے درمیان تندو تیز جملوں کا تبادلہ ہوا۔اسپیکر نے خرم شیرزمان کا مائک بند کرا دیا۔اسپیکر نے ان سے کہا کہ آپ بیٹھ جائیں میں آپکو بات کرنے کی اجازت نہیں دے سکتا۔ آغا سراج درانی نے خرم شیر زمان سے کہا کہ میں آپکو پانچ برسوں سے سکھانے کی کوشش کر رہا ہوں۔سینئر وزیر نثار کھوڑو کی تقریر کے دوران خرم شیرزمان کی طنزیہ انداز میں تالیاں بجاتے رہے جس پر کھوڑو نے اسپیکر سے کہا کہ انہیں تالیاں بجانے سے روکا جائے، یہ غیر پارلیمانی عمل ہے۔اسپیکر نے تحریک التواء ایوان میں پیش کردی جسے کثرت رائے سے رد کردیا گیاتحریک التواء مسترد کئے جانے پر پی ٹی آئی ارکان خرم شیرزمان اور سیما ضیاء بطوراحتجاج واک آوٹ کر گئے۔خرم شیر زمان نے ناراض ہوکر ایجنڈے کی کاپی پھاڑ ڈالی۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -