منہاج القرآن سیکریٹریٹ سے اسلحہ مل جائے تو مارچ کی کال واپس لے لونگا،طاہر القادری

منہاج القرآن سیکریٹریٹ سے اسلحہ مل جائے تو مارچ کی کال واپس لے لونگا،طاہر ...


لاہور(آئی این پی) عوامی تحریک کے سربراہ طاہر القادری نے وفاقی وصوبائی ورزء ‘سیاسی جما عتوں کے قائدین اور انسانی حقوق کی تنظیموں کو منہاج القرآن سیکریٹریٹ کے دورے کی دعوت د یتے ہوئے کہا ہے کہ اگر یہاں سے کوئی اسلحہ یا دھماکہ خیز مل جائے تو میں خود انقلاب مارچ کی کال واپس لے لوں گا ‘حکو مت کی تمام رکاوٹوں کے باوجود ہر صورت14اگست کو لاہورسے ’’انقلاب مارچ ‘‘روانہ ہو گا ‘ حکومت ہمیں محبوس رکھنا چاہتی ہے لیکن اس طرح کے ہتھکنڈوں سے تحریک ختم نہیں ہوگی‘ہمارے انقلاب مارچ میں بد امنی یا تشدد کا سوال ہی پیدا نہیں ہو تا ہم نے ہمیشہ امن کی بات کی ہے ‘کارکنو ں کو تشدد پر اکسانے کے الزامات بے بنیاد ہیں‘سالانہ پچاس سے ساٹھ ہزار افراد کو اعتکاف میں بٹھا کر امن کی تربیت دی بعض لوگ میڈیا پر بیٹھ کر بے بنیاد الزام تراشی کر رہے ہیں‘ عوامی تحریک اور انقلاب مارچ میں منہاج القرآن کے تعلیمی اداروں کے طلبا شامل نہیں انہیں تو 21 اگست تک تعطیلات پر اپنے اپنے گھروں میں بھیج دیا گیا ہے منہاج یونیورسٹی کے ہاسٹل طلبا سے خالی ہیں اور وہاں خواتین اور مرد کارکن رہائش پذیرہیں۔ منگل کے روز سنی اتحاد کونسل کے وفد سے ملاقات کے موقعہ پر پر یس کا نفر نس کرتے ہوئے پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ میں حکومت سمیت تمام سیاسی جماعتوں کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ یہاں آئیں اور تلاشی لے لیں اگران کے دفتر سے اسلحہ نکل آئے تو فوری طور پر انقلاب مارچ سے دستبردار ہوجائیں گے‘وفاقی وزریر خواجہ سعد رفیق ‘صوبائی وزیر رانا مشہود احمد خان سمیت وفاقی اور صوبائی حکو مت کا بھی وزیر ‘مشیر اور سیاسی جما عتوں کے نمائند ے منہاج القرآن آنا چاہے انکو مکمل دعوت دیتا ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان عوامی تحریک کا کوئی کارکن بدامنی پھیلانے کا تصور بھی نہیں کرسکتا‘ انتہائی پرتشدد حالات میں بھی صبر کا دامن ہاتھ سے نہیں چھوڑا اس لئے یہ تحریک انفرادی اور اجتماعی طور پر بدامنی کا تصور نہیں کرسکتی۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے کسی ایک بھی کارکن نے کہیں گولی نہیں چلائی بلکہ انہوں نے جبر و تشدد کا سامنا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کے برعکس بعض لوگ ناجائز طریقے سے تاریخ کی سب سے بڑی پرامن تحریک کو پرتشدد ثابت کرنے پر تلے ہوئے ہیں۔ڈاکٹرطاہرالقادری کا کہنا تھا کہ ان کی تحریک اور انقلاب مارچ میں منہاج القرآن کے تعلیمی اداروں کے طلبا شامل نہیں انہیں تو 21 اگست تک تعطیلات پر اپنے اپنے گھروں میں بھیج دیا گیا ہے منہاج یونیورسٹی کے ہاسٹل طلبا سے خالی ہیں اور وہاں خواتین اور مرد کارکن رہائش پذیر ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ پر امن احتجاج کی ضمانت دے رہے ہیں اور ان کی تحریک اور کارکن اسلام آباد پہنچ کر بھی پر امن رہیں گے لیکن اس کے باوجود ان کے راستے میں رکاوٹیں حائل کر دی گئی ہیں‘ حکومت ہمیں محبوس رکھنا چاہتی ہے لیکن اس طرح کے ہتھکنڈوں سے تحریک ختم نہیں ہوگی۔انہوں نے کہا کہ ان کے کارکن پرامن ہیں کسی نے ایک بھی گولی نہیں چلائی‘راستے بند ہونے کی وجہ سے ادویات اور خوراک کی ترسیل بھی منقطع ہے۔ ایم کیو ایم کے ارکان اپنے کندھوں پر اشیا رکھ کر ماڈل ٹا ؤن پہنچے‘ عوامی تحریک کے سربراہ نے پرامن رہنے کی یقین دہانی کراتے ہوئے کنٹینر ہٹانے کا مطالبہ بھی کیا

مزید : صفحہ اول


loading...