انقلاب اور آزادی مارچ کے اعلان سے کروڑوں کا نقصان پہنچا ہے ٹیکسٹائل ملز مالکان

انقلاب اور آزادی مارچ کے اعلان سے کروڑوں کا نقصان پہنچا ہے ٹیکسٹائل ملز ...

                       لاہور(کامرس رپورٹر)پنجاب بھر کے ٹیکسٹائل ملز مالکان نے کہا ہے کہ ملک میں جب سے انقلاب اور آزادی مارچ کا اعلان ہوا ہے اس وقت سے لے کر آج تک پنجاب کی ٹیکسٹائل ملوں کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچا ہے جبکہ25سے 30ملین ڈالر کی ٹیکسٹائل برآمدات متاثر ہو رہی ہیں۔گزشتہ روز آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن (اپٹما)پنجاب زون کے چیئرمین ایس ایم تنویر نے اپٹما ہاﺅس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آزادی مارچ اور انقلاب مارچ کرنے والے رہنماﺅں کو چاہئے کہ وہ اپنے مسائل سڑکوں پر دھرنے دینے اور لانگ مارچ کی بجائے مذاکرات کے ذریعے حل کریں کیونکہ پوری دنیا کو پاکستان کے حوالے سے منفی پیغام مل رہا ہے جس کے باعث ٹیکسٹائل برآمدکنندگان کو برآمدی آرڈرز ملنے بند ہو گئے ہیں جبکہ جو آرڈرز مل چکے ہیںان کی شپمنٹ میں تاخیر ہو رہی ہے اور انہیں بذریعہ جہازبھجوانے سے برآمدکنندگان کی لاگت بڑھ گئی ہے ۔انہوں نے کہا کہ کراچی سے لاہور کنٹینرز نہیں آ رہے جس کی وجہ سے نئی شپمنٹ بھجوانی مشکل ہو چکی ہیں اگر ملک میں غیر یقینی صورتحال جاری رہی اور آزادی مارچ کے باعث حالات خراب ہو گئے تو نہ صرف پنجاب کی ٹیکسٹائل انڈسٹری کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا بلکہ برآمدات بری طرح متاثر ہوں گی ۔انہوں نے بتایا کہ پاکستان کی ٹیکسٹائل ایکسپورٹ کا 70فیصد پنجاب سے ہے اورملک کی سالانہ ٹیکسٹائل برآمدات 13.7ارب ڈالر ہیں ۔حکومت کی کوششوں کے ذریعے پاکستان کو جی ایس پی پلس کا درجہ ملا۔ٹیکسٹائل انڈسٹری جی ایس پی پلس کی تیاری کر رہی تھی کہ ملک میں آزادی مارچ کے باعث امن و امان کی صورتحال خراب ہونے کا خدشہ ہے ۔مزدوروں کو ملوں میں آنے میں مشکلات کا سامنا ہے۔کنٹینر مل نہیں رہے۔بجلی اور گیس کی لوڈشیڈنگ سے صنعتی پیداوار کم ہو رہی ہے ۔ان حالات میں پنجاب کی ٹیکسٹائل ملوں کو چالو رکھنا مشکل ہو گیا ہے لہٰذا ہماری حکومت اور آزادی اور انقلاب مارچ کرنے والے رہنماﺅں سے اپیل ہے کہ وہ ملک میں محاذ آرائی نہ کریں اور پرامن طریقے سے اپنے مسائل مذاکرات کے ذریعے حل کریں۔

ٹیکسٹائل ملز مالکان

مزید : علاقائی


loading...