جے یو آئی کا اکیلے حکومت مخالف تحریک شروع کرنے کا فیصلہ

  جے یو آئی کا اکیلے حکومت مخالف تحریک شروع کرنے کا فیصلہ

  

لاہور(شہزاد ملک) حکومت مخالف احتجاجی تحریک کا شیڈول مرتب کرنے کے لئے اپوزیشن کی اے پی سی کا ایجنڈا طے کرنے کے لئے بحال کی گئی اپوزیشن کی رہبر کمیٹی کااجلاس بلانے کے لئے اپوزیشن جماعتیں تا حال کسی بھی حتمی نتیجہ پر نہیں پہنچ سکی ہیں دوسری جانب اپوزیشن کی ایک بڑی جماعت جے یو آئی (ف) نے اکیلے ہی حکومت مخالف احتجاجی تحریک شروع کرنے کے لئے کے پی کے میں جلسے جلوس اور کانفرنسیں منعقد کرنے کا شیڈول جاری کردیا ہے،ذرائع کا کہنا ہے کہ گزشتہ دنوں اسمبلی میں حکومت کی طرف سے پیش کردہ بل ایف اے ٹی ایف پر پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی جانب سے اس بل کی حکومت کی حمائت کرنے پر جے یو آئی (ف) نے ان دونوں جماعتوں سے اپنے تحفظات کا اظہار کردیا تھا اور واضح طور پر ان دونوں جماعتوں سے کہہ دیا تھا کہ آپ نے اس ایشو پر جے یو آئی سے مشاورت نہیں کی لہذا اب جے یو آئی بھی اپنے فیصلوں پر آزاد ہے،ادھر جے یو آئی (ف) کے ذرائع کا کہنا ہے کہ جے یو آئی کے سر براہ مولانا فضل الرحمن نے ماہ ستمبر کو بطور تحفظ ختم نبوت ﷺ کانفرنسوں کے طور پر منانے کا فیصلہ کیا ہے جس کے تحت ستمبر کے پہلے ہفتے کے پی کے اور پھر پندرہ ستمبر کو کوئٹہ میں کانفرنسیں منعقد کی جائیں گی اور پھر اس کا سلسلہ ملک بھر میں بڑھا دیا جائے۔دوسری جانب پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کے مابین اے پی سی کے انعقاد کے حوالے سے رابطوں کا سلسلہ تو جاری ہے مگر تا حال اس بات کا کوئی بھی فیصلہ نہیں ہو سکا ہے کہ یہ اے پی سی کہاں ہو گی۔یہاں پر یہ بھی امر قابل ذکر ہے کہ عید سے قبل اپوزیشن جماعتوں کے مابین اس بات پر اتفاق رائے ہو گیا تھا کہ ہم عید کے بعد رہبر کمیٹی کو مینڈیٹ دیں گے کہ وہ اپنی میٹنگ بلا کر اے پی سی کاایجنڈا اور مقام طے کریں تاہم ابھی تک اس رہبر کمیٹی کی میٹنگ کے بارے میں بھی کوئی فیصلہ نہیں ہو سکا ہے اس طرح سے اپوزیشن کی اے پی سی غیر معینہ مدت کے لئے التواء کا شکار ہو کررہ گئی ہے اور یہ بھی امکان ہے کہ محرم الحرام سے قبل اے پی سی کا کوئی فیصلہ ہو جائے اور پھر محرم کے بعد احتجاجی شیدول مرتب کرنے پر اتفاق رائے ہو جائے۔  

جے یو آئی

مزید :

صفحہ اول -