فراہمی آب منصوبوں میں کروڑوں روپے کے گھپلوں کا انکشاف 

فراہمی آب منصوبوں میں کروڑوں روپے کے گھپلوں کا انکشاف 

  

ملتان (سپیشل رپورٹر)سال 2008ء سے 2013ء کے دوران واسا ملتان میں فراہمی آب کے منصوبوں میں بھی کروڑوں روپے کی کرپشن کا انکشاف ہوا ہے،وزیراعلی انسپکشن ٹیم کی خفیہ رپورٹ کے مطابق سابق پی ایم پیکچ کے تحت شہر کے مضافاتی علاقوں میں واٹر سپلائی اسٹیشنوں کی تنصیب،واٹر سپلائی لائنوں کی تنصیب اور پرانے واٹر سپلائی اسٹیشنوں و لائنوں کی اپ گریڈیشن کے دوران اس وقت کے سابق ڈائریکٹر ورکس اینڈ انجیئنرنگ واسا و ایم ڈی ملک تصدق نے اس وقت کے ڈی جی ایم ڈی اے کی ملی بھگت سے فرضی ناموں سے کمپنیاں رجسٹرڈ کرا کر خود کام کرائے جس میں ناقص مٹریل اور جنک یارڈ سے خریدی گئی مشینری استعمال کرکے واسا ایجنسی کو کروڑوں کا چونا لگایا گیا مذکورہ واٹر سپلائی اسٹیشن اور لائنیں بھی اپنی ٹیکنکل لائف 40سال کی بجائے 10سال میں ہی جواب دے گئیں،ملک تصدق کی ٹیم کے6پیاروں میں سے تین ریٹائرڈ جبکہ تین اب بھی واسا کی اہم پوسٹوں پر براجماں،مرکزی کردار ملک تصدق نے ملک چھوڑ کر فلپائن میں مستقل سکونت اختیار کرلی۔ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ واسا ملتا ن میں سال 2008ء سے 2013ء کے دوران شہر یوں کو فراہمی آب کے منصوبوں میں بھی بڑے پیمانے پر کرپشن کی گئی ہے۔اس مقصد کیلئے سابق وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی کے ملتان کیلئے پی ایم پیکچ کے تحت نئے ٹیوب ویلوں اور واٹر سپلائی لائنوں کی تنصیب کیلئے اربوں روپے کے فنڈز جاری کئے گئے اس دوران ایشن ڈویلپمنٹ بنک،اور یوایس ایڈ کی جانب سے بھی کروڑوں ڈالرز کی فنڈنگ کی گئی لیکن اس وقت واسا میں تعینات ڈائریکٹر ورکس اینڈ انجینئرنگ و ایم ڈی واسا ملک تصدق نے اس وقت کے ڈی جی ایم ڈی اے اور اپنی ٹیم میں شامل 6پیاروں ایس ڈی او واسا محمد آصف،چوہدری اصغر،جاوید قریشی،مشتاق خان،اورسیئر ز شیخ وحید اور آصف فرانسس سمیت مشہور کنٹریکٹر شیخ نصراللہ کی ملی بھگت سے فرضی کمپنیاں بنا کر نئے ٹیوب ویلوں اور واٹر سپلائی لائنوں کی تنصیب میں غیر معیاری مشینری استعمال کی جو جنک یارڈ سے خریدی گئی اسی طرح ٹیوب ویلوں کے بور چار سو فٹ کی بجائے تین سو فٹ کئے گئے اور اس مد میں کروڑوں روپے کی کرپشن کی گئی۔سی ایم انسپکشن ٹیم کی خفیہ رپورٹ کے مطابق مذکورہ کرپشن کے مرکزی کردار ملک تصدق ملک چھوڑ کر اس وقت فلپائن میں اپنی پرتعیش زندگی گزار رہے ہیں جبکہ کنٹریکٹر شیخ نصراللہ بھی ملک چھوڑ چکے ہیں۔جبکہ اس وقت کی ٹیم میں شامل 6پیاروں میں سے تین ملازمت سے ریٹائرڈ ہوچکے ہیں جن میں محمد آصف،چوہدری اصغر اور جاوید قریشی شامل ہیں جبکہ بقیہ تین افسران جن میں مشتاق خان موجودہ قائمقام ایم ڈی واسا،آصف فرانسس ڈپٹی ڈائریکٹر حسن پروانہ ڈوثیرن اور ایم ٹی او واسا جبکہ شیخ وحید ڈپٹی ڈائریکٹر گارڈن ٹاؤن سب ڈویثرن واسا میں تعینات ہیں۔انسپکشن ٹیم کی رپورٹ میں مذکورہ ریٹائرڈ و حاضر سروس واسا افسران کو شامل تفتیش کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

مزید :

صفحہ اول -