کیا  منصورہ  ہسپتال  کسی  مسیحی  تنظیم  کے سپرد  کیا  جارہا   ہے؟

کیا  منصورہ  ہسپتال  کسی  مسیحی  تنظیم  کے سپرد  کیا  جارہا   ہے؟
کیا  منصورہ  ہسپتال  کسی  مسیحی  تنظیم  کے سپرد  کیا  جارہا   ہے؟

  

جماعت ِ  اسلامی بنیادی  طورپر  ایک اسلامی  دعوتی، تحریکی،فلاحی  اور جہادی  تنظیم   تھی  جس  کا  مقصددعوت  و  تبلیغ  کے ذریعے  میں ملک   میں  صالح  معاشرے کا قیام  تھا۔چنانچہ  اس کا ہر رکن داعی قرارپاتا تھالیکن  بعد میں اس نے سیاست  کا راستہ  اختیار  کر لیا  اور مغربی  جمہوریت  کے  زیر اثر انتخابات  میں حصہ لینے  لگی،جس کے  نتیجے  میں یہ جماعت اپنی منزل   سے دور  ہوتی چلی  گئی۔اس جماعت  نے ملک میں  متعدد  رفاہی  منصوبوں کی داغ بیل بھی ڈالی،خصوصا تعلیم ، صحت  اور  خدمت  خلق کے  میدان   میں  متعدد  ادارے تشکیل دیے لیکن سیاسی عمل دخل کے  نتیجے  میں  دیگر  شعبوں  کی طرح ان شعبوں کی  کارکردگی  بھی بری  طرح متاثر ہوئی۔

     منصورہ  ہسپتال  جماعت اسلامی کے متعدد فلاحی اور  رفاعی منصوبوں  میں  سے ایک ہےجس کا مقصد علاقے کے مکینوں کو  علاج معالجہ کی معیاری  سہولیا ت کی فراہمی کو یقینی  بنانا  تھا۔منصورہ   ہسپتال جس  جگہ پر قائم  ہے  اس کے اردگرد  مختلف  بستیاں  آباد ہیں  جن  میں  لاکھوں  کے  قریب لوگ  رہتے  ہیں،جن میں  زیادہ  تعداد غریب  اور لوئر مڈل کلاس  سے تعلق رکھتی  ہے۔ابتدائی برسوں  میں   یہ  ہسپتال  ان قریبی آبادیوں  کے رہائشیوں کو  علاج معالجہ  کی  سہولیات  فراہم کرتا  رہا بعد  ازاں یہ  ہسپتال   ایک مافیا کی  گرفت میں آگیا جس کی وجہ سے نہ صرف غریب لوگوں کے لیے  علاج معالجہ کی سہولیات  کا حصول مشکل ہو نے  لگا  بلکہ  ادویات بھی  غیر معیاری  ادویات بنانے  والے  ادویہ ساز  اداروں  اور  مخصوص کمپنیوں  ہی کی فروخت  کی جانے لگیں،جس  سے  منصورہ  ہسپتال کی ساکھ پر برا  اثر پڑا۔

اس دوران   منصورہ  ہسپتال کےذمہ داران نےہسپتال  کی  دگر گوں صورت حال کے  پیش  نظر ایک تجربہ  کار  ڈاکٹر  اور بہترین منتظم کو ہسپتال کی ذمہ داریاں سونپ دیں جنہوں  نے  بطور  میڈیکل سپرنٹنڈنٹ  ہسپتال  میں  انتظامی  اصلاحات کرتے  ہوئے  اس  کی سابقہ  ساکھ بحال کرنے کی کامیاب کوشش کی۔انہوں نے  ہسپتال کو سٹیٹ آف  دی آرٹ  ادارہ   بنانے کے لیے  دن رات  کوششیں شروع کردیں۔ایک  طرف  انہوں  نے  عام  غریب  آدمی کا اس  ہسپتال  پر اعتماد بحال کیا   دوسری طرف  انہوں نے  ہسپتال کے  تمام  شعبہ جات  میں اصلاحات لا  کر  ان  کی کارکردگی  کو بہتر بنادیا،اُنہوں نے  ہسپتال  کے  نچلے  درجے  کے ملازمین کی عزت  ِ  نفس   بحال کی، تنخواہوں میں  اضافہ  کیا  گیا،سینئر  سٹاف  کو بھی ان  کی  ضروریات کے  مطابق سہولیات  بہم  پہنچائیں،تمام  سٹاف کو بہترین  ورکنگ ماحول مہیا کیا  گیااور اس کے ساتھ ساتھ  ان میں  احسا س ِ ذمہ داری کو  بھی  اجاگر  کیا،ہسپتال  میں قائم سکول فار نرسنگ کے معیار کو بہترین  بنادیا۔

ہسپتال  انتظامیہ  نے  نہ  صرف علاج کی غرض سے  آنے  والے لوگوں کو معیاری  طبی سہولیات فراہم کیں  بلکہ  ہسپتال کے وسائل میں  بھی  خاطر خواہ  اضافہ کیا،اس  انتظامیہ  کا کمال یہ  بھی  تھا کہ  وہ  مافیا جو ہسپتال کے  وسائل کو شیر  ِ  مادر  سمجھ کر ہڑپ  کررہا تھا  اس کونکیل  ڈال  دی گئی اور  فول  پروف  انتظامات کے ساتھ ساتھ  ایسا نظام  بھی  وضع کیا کہ چند برسوں کے  اندر ہی  یہ  ہسپتال  ملتان روڈ کے  ارد گرد کی  آبادیوں  کے  لاکھوں مکینوں  کے لیے  بہترین  علاج  گاہ کا درجہ حاصل کرنے میں کامیاب  ہو  گیالیکن  جیسا کہ  ہمیشہ سے  ہوتا آیا ہے  کہ اصلاح ِ احوال کی جب   اور  جہاں  بھی کوشش کی جاتی ہے  مفاد پرست عناصر سازشوں میں مصروف ہو جاتے ہیں۔

آج  صور ت  ِ  حال یہ ہے  کہ  ہسپتال  پر ایک بار  پھر  مافیا  کی حکمرانی دکھائی دیتی ہے،امیر جماعت  اسلامی  یا  تو ان  حالات سے مکمل طورپر لاعلم  ہیں  یا  پھر  وہ  اس مافیا  کے ہاتھوں میں یرغمال  بن چکے  ہیں۔حال ہی  میں  ہسپتال کی مجلس منتظمہ کی  طرف  سے  مقامی  انگریزی  اخبار  ( ڈان)  میں ایک اشتہار  شائع  کروایا گیا ہے  جس میں ”  ایک مشنری  ہسپتال  کے لیے میڈیکل کے  شعبہ سے وابستہ   تجربہ کار  ڈاکٹر ز سے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ  کی پوسٹ پر تعیناتی کے  لیے  درخواستیں  طلب کی گئی ہیں۔امیدواروں کے لیے کسی  ” مشنری “   ہسپتال میں کام کرنے کا تجربہ لازمی شرط  قرار دیا گیا ہے۔اشتہار  کا نفس  ِ  مضمون  اور  اس  کے   مندرجات  اس  قدر  مضحکہ  خیر  ہیں  کہ  جن سے  مشتہر  کی لاعلمی  اور  ذہنی  ناپختگی  عیاں  ہو جاتی  ہے۔

حقیقت یہ  ہے کہ  منصورہ  ہسپتال کے لیے ” ایک مشنری  ہسپتال “ کا  نام  استعمال کرنے سے  جماعت اسلامی  سے ہمدردی  رکھنے  والے  لاکھوں لوگوں  اور  ہسپتال کے قرب  و جوار میں  رہنے  والے  مکینوں میں  عجیب  قسم کا حیرت  اور استعجاب  پایا جاتا ہے،کیوںکہ  قیام  پاکستان سے  قبل  اور  بعد  میں   مشنری  اداروں کے  الفاظ صرف  ایسے  اداروں کے حوالے  سے  استعمال ہو تے رہے  ہیں جو  یا تو مسیحی مذہب   سے  تعلق  رکھتے  ہوں یا کسی یہودی  تنظیم سے متعلقہ۔ کیوںکہ  ملک میں آج بھی ہزاروں کی  تعداد میں ایسے  تعلیمی  ادارے  اور ہسپتال  قائم ہیں جن کا انتظام  و انصرام  مسیحی تنظیموں کے سپرد  ہے۔یوں ایسے  مشنری ادارے دراصل  اپنے  ظاہری  کام  کے ساتھ  ساتھ  اپنے مذہب کی تبلیغ  کا کام  بھی  سرانجام دے  رہے  ہیں تاہم  کسی  مسلمان  ادارے کے ساتھ  مشنری  کے  الفاظ  کم کم ہی  سننے  میں  آیا  ہے ۔چنانچہ اس صورت حال کے پیش نظر یہ گمان  پیدا  ہونا  ایک  فطری امر  ہے  کہ منصورہ  ہسپتال بھی کسی مسیحی تنظیم کے  سپرد کردیا گیا ہے ۔انگریزی   اخبار میں شائع  کروائے جانے والے   ا شتہار سے تو کم از کم یہی  اندازہ  لگایا جاسکتا  ہے۔

 اب یہ کوئی  ڈھکی  چھپی بات  نہیں  ہے کہ جماعت اسلامی  ایک  مذہبی  پس منظر  رکھنے  والی  سیاسی جماعت  ہے جو  ملکی  سیاست میں فعال کردار  ادا کرتی  اور  انتخابی سیاست  میں بھی بھرپور  حصہ لیتی  ہے۔ اس کے  اس کردار کے  باعث اسے عوامی تعاون، ہمدردی  اور حمایت کی  ضرورت  ہمیشہ  سے  رہی ہے ۔ جماعت کے رفاہی اور فلاحی  ادارے درحقیقت اس کے لیے ”کیچ منٹ  ایریا “  کا درجہ رکھتے  ہیں َ۔ اگر  ان  اداروں سے عام آدمی کو فائدہ  پہنچتا ہے اور  وہ ان اداروں کی کارکردگی  سے مطمئن  ہوتا ہے تو اس  کے اثرات لامحالہ انتخابات میں بھی پڑیں گے۔ایسے علاقے جہاں پر  اس قسم کے  فلاحی ادارے  موجود ہیں وہاں  جماعت کے امیدوار کے  لیے  انتخابی مہم  چلانااور  ووٹ  حاصل  کرنا  دوسرے  علاقوں کی  نسبت  بہرحال  زیادہ  آسان  اور سہل ہو سکتا ہے۔

جماعت کے  تین  اہم  عہدیدار  لیاقت بلوچ،  فرید احمد  پراچہ  اور  امیرالعظیم  کا  حلقہ انتخاب  یہی  علاقے  ہیں ۔سو  جماعت کے زیر انتظام  ایسے  اداروں کی بہتر کارکردگی  اور عام آدمی کو  زیادہ  سے زیادہ  سہولیات کی  فراہمی  اس کے دل  میں  جماعت کے لیے  جذبہ ہمدردی پیدا کرنے کا موجب بن سکتی  ہےلیکن  شائد جماعت کی قیادت  اس حقیقت  سے ناواقف  ہے جس کا بین  ثبوت  منصورہ  ہسپتال کی موجودہ  شناخت کو  تبدیل کرنے اوراس  کاا نتظام  و انصرام  ایسےلوگوں کے سپرد کرنے کی سعی ء نامشکور کی صورت میں ہمارے سامنے ہے،جو نہ  تو  ہسپتال کے معاملات سے کماحقہ واقف و آگاہ ہیں  اورنہ ہی  اردگرد کی  آبادیوں  کے مکینوں   اور  ان کی  نفسیات کے بارے میں  انہیں پوری  طرح  کوئی  علم  حاصل  ہے ۔ظاہر  ہے یہ بات جماعت اسلامی  کے مفاد میں قطعا نہیں  ہوسکتی ۔سوال  یہ  ہے  کہ  کیا جماعت کی  قیادت  اور فیصلہ سازی  اور پالیسی میکنگ  کا اختیار رکھنے  والے اکابرین  ِ جماعت کو ان حقائق کا ادراک بھی ہے؟۔۔۔

 نوٹ:یہ بلاگر کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں ۔

                                                                          

مزید :

بلاگ -