کرپشن معمہ بن گئی ، چیئرمین نیب اور وزیردفاع کے درمیان "ٹھن" گئی

کرپشن معمہ بن گئی ، چیئرمین نیب اور وزیردفاع کے درمیان "ٹھن" گئی
کرپشن معمہ بن گئی ، چیئرمین نیب اور وزیردفاع کے درمیان

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) قومی احتساب بیورو(نیب ) کے چیئرمین فصیح بخاری نے کہاہے کہ کرپشن کی لہر پورے ملک میں چل رہی ہے،کرپشن ختم ہوگئی تو مچھلی رہے گی نہ ہی مگرمچھ،روزانہ آٹھ سے دس ارب روپے لوٹے جا رہے ہیں جبکہ وزیردفاع نوید قمر نے کہاہے کہ چیئرمین نیب کرپشن سے متعلق بیانات قانون کی خلاف ورزی کررہے ہیں،پیپلزپارٹی کوبدنام کرنے کے لیے کرپشن کا شوشہ چھوڑاگیاہے ۔ میڈیا سے گفتگومیں فصیح بخاری نے کہا کہ پاکستان میں ریاست کے دو نہیں ،تین ستون رہ گئے ہیں ،سپریم کورٹ نیب سے ناراض ہے، ہمیں بہتر کارکردگی دکھانا ہوگی۔ اُنہوں نے بتایا کہ نیب میں اس وقت 1700 مقدمات زیر التوا ہیں،میڈیا خبروں کو سپن کرتا ہے۔ اُن کاکہناتھاکہ نگران حکومت کو توسیع دینے اور فوجی حکومت کا وقت گزر گیا،اب ہر کام دستور کے مطابق ہوگا، ٹیکس چوری کرنے والوں سے ایف بی آر پوچھے گا۔چیئرمین نیب کا کہنا تھا کہ سسٹم کو درست کرنا مشکل کام ہے، ملک کا ریگولیٹری میکانیزم تباہ ہوچکا ہے، جسے بہتر بنانا ہوگا۔دوسری طرف وزیردفاع نوید قمر نے کہاکہ چیئرمین نیب کس طرح روزانہ کی سات ارب روپے کی کرپشن کا کیسے اندازہ لگاسکتے ہیں ، کرپشن سے متعلق بیان میں کوئی حقیقت نہیں ۔اُن کاکہناتھاکہ نواز شریف کو سندھ میں سے کچھ بھی نہیں ملے گا، کراچی میں فوجی آپریشن کی ضرورت نہیں ، فوج اور حکومت کے درمیان بہترین تعلقات ہیں ، آرمی چیف اپنا آئینی وقانونی کرداراداکررہے ہیں ۔اُنہوں نے کہاکہ قومی سلامتی کے معاملات پر حکومت اور فوج کی حکمت عملی ایک ہی ہے، امریکہ سے عسکری تعلقات میں بہتری آرہی ہے ۔ایک سوال کے جواب میں اُن کاکہناتھاکہ فیئرٹرائل ایکٹ بہت ضروری ہے جس سے دہشت گردی کے خاتمے میں مدد ملے گی،دہشت گرد عدم ثبوت کی بناءپر رہاہوجاتے ہیں ۔

مزید :

اسلام آباد -