لال مسجد پر فوج کشی کے خلاف تحقیقاتی کمیشن چیلنج کردیا گیا

لال مسجد پر فوج کشی کے خلاف تحقیقاتی کمیشن چیلنج کردیا گیا
لال مسجد پر فوج کشی کے خلاف تحقیقاتی کمیشن چیلنج کردیا گیا

  


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ کی طرف سے لال مسجد واقعہ پر بنایا گیا کمیشن سپریم کورٹ میں ہی چیلنج کردیا گیاہے ۔اس ضمن میں دائر کی جانے والی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ فوجداری معاملے میں کمیشن نہیں بنایا جاسکتا۔ صرف دیوانی معاملات میں بنایا جاسکتا ہے۔درخواست گزار شاہدارکزئی نے موقف اختیار کیا ہے کہ سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے چار دسمبر کو وفاقی شرعی جج کی سربراہی میں ایک رکنی کمیشن بنایا جو کہ آئین کے خلاف ہے۔ لال مسجد میں غازی عبدالرشید اور مسلح دستوں اور حکومت کے دستوں کے مابین لڑائی ہوئی جو ایک فوجداری جرم تھا۔ درخواست گزار نے آئینی شقوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ شرعی عدالت کے جج سپریم کورٹ کے کمیشن کی سربراہی کا حکم ماننے کے پابند نہیں ہیں لہذا لال مسجد واقع پر بنائے جانے والے عدالتی کمیشن کو کام کرنے سے روکا جائے۔

مزید : اسلام آباد


loading...