محکمہ لٹریسی کے فیلڈ افسران کی مانیٹرنگ یقینی بنائی جائے،پرویز احمد خان

محکمہ لٹریسی کے فیلڈ افسران کی مانیٹرنگ یقینی بنائی جائے،پرویز احمد خان

 لاہور (ایجوکیشن رپورٹر)محکمہ لٹریسی و غیررسمی بنیادی تعلیم کے دو جاری منصوبوں پنجاب ورکس پلیس لٹریسی اور پنجاب ایکسلیریٹڈ فنکشنل لٹریسی پراجیکٹ نے حکومتِ پنجاب کی انرولمنٹ ایمرجنسی مہم کے تحت اب تک 59ہزار سے زائدبچوں کو اپنے سکولوں میں داخل کیا اس امر کا اظہار سیکرٹری لٹریسی ڈاکٹر پرویز احمد خان کی صدارت میں محکمہ کی ماہانہ کارکردگی کا جائزہ لینے کیلئے منعقدہ اجلاس میں کیا گیااجلاس سے خطاب کرتے ہوئے سیکرٹری لٹریسی نے محکمہ اور فروغِ خواندگی کیلئے جاری سکیموں کے افسران کو ہدایت کی کہ خواندگی کے مطلوبہ اہداف کے حصول اور فنڈز کے مقررہ مدت کے اندر شفاف استعمال، محکمہ میں نئے بھرتی ہونیوالے اہلکاروں کی تربیت فیلڈ افسران واداروں کی مانیٹرنگ کو یقینی بنانے کے لیے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہ کیا جائے اجلاس کو بتایا گیا کہ 30 نومبر 2014 تک محکمہ لٹریسی کے سالانہ ترقیاتی پروگرام 2014-2015 کے تحت جاری شدہ فنڈز کے اخراجات کا تناسب 72% ہے صدر اجلاس نے شرکاء کو ہدایت کی کہ ترقیاتی و غیر ترقیاتی اخراجات کمپیوٹرائزڈاور بذریعہ بینک کئے جائیں دورانِ اجلاس بتایا گیا کہ کمیونٹی لرننگ سنٹر پراجیکٹ فیز ٹو کے تحت اب تک 2804 کمیونٹی لرننگ سنٹرز قائم کیے جا چکے ہیں سکرٹیری لٹریسی نے متعلقہ پراجیکٹ ڈاریکٹرز کو ہدایت کی کہ معیارِ تعلیم، اساتذہ کی جانچ کاری ، ٹریننگ اور مانیٹرنگ پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہونا چایئے اور اس امر کو یقینی بنانے کے لیے افسران دفاتر میں بیٹھنے کی بجائے فیلڈ میں رہیں اور فریش پراگریس رپورٹس روزانہ لٹریسی ہیڈکوارٹرز کو بھجوائی جائیں۔اجلاس میں ایڈیشنل سیکریٹری ندیم عالم بٹ،ڈپٹی سیکریٹری(ایڈمن) کلثوم ثاقب، پراجیکٹ ڈائریکٹرزاور دیگر افسران بھی موجود تھے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...