درآمدی اشیاء پربلاجواز ٹیکس سے عوام کی معاشی مشکلات میں اضافہ ہوگا ‘ ظہیر بھٹہ

درآمدی اشیاء پربلاجواز ٹیکس سے عوام کی معاشی مشکلات میں اضافہ ہوگا ‘ ظہیر ...

  

لاہور ( کامرس رپورٹر)ٰچیئرمین لاہور ٹاؤن شپ انڈسٹریز ایسوسی ظہیر بھٹہ نے کہا ہے کہ درآمدی اشیاء پر بلاجواز ٹیکسوں کے نفاذ سے عوام کی معاشی مشکلات میں اضافہ ہوگا ،ایس آر او کلچر صنعتکاروں کیلئے پریشانی کا باعث ہے ،313اشیاء پر سیلز ٹیکس بڑھانے سے براہ راست عام آدمی متاثر ہورہا ہے اور ان ٹیکسوں کے نفاذ سے مہنگائی کا طوفان آگیا ہے ،آئی ایم ایف سے قرضوں کے حصول کیلئے ان کی شرائط پر خسارہ پورا کرنے کیلئے درآمدی اشیاء پر40ارب کے نئے ٹیکس لگانا غریب عوام کی معاشی زندگی میں مزید مشکلات کو بڑھانے سے کم نہیں ہے۔کیونکہ عام خوردونوش اشیاء پر ٹیکس لگنے سے پاکستان کا ہر شہری مہنگائی کی لپیٹ میں آئے گا اور بالواسطہ اور بلاواسطہ ٹیکسوں کا تمام تر بوجھ عوام پر پڑے گا جس سے پاکستان کا ہر شہری مہنگائی سے متاثر ہوگا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے خالد افضل شیخ سینئر وائس چیئرمین ،نعمان حسین وائس چیئرمین کے ساتھ ٹاؤن شپ انڈسٹریز کے صنعتکاروں کے مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ ظہیر بھٹہ نے کہا کہتمام ٹیکس بجٹ میں پارلیمنٹ کی منظوری سے لگائے جائیں ایس آراوکے ذریعے ٹیکسز کانفاذپارلیمنٹ کے اختیارات سے تجاوز ہے انہوں نے کہا کہ حکومت کو چاہیے کہ وہ عوام کو ٹیکس جمع کرانے کیلئے سہولتیں فراہم کرے اور ٹیکس جمع کروانے کیلئے آسان طریقے متعارف کروائے تاکہ ٹیکس نیٹ کو بڑھایا جاسکے جس سے رواں ماہ کے ٹیکس اہداف کا خسارہ بھی پورا ہوسکے گا۔انہوں نے کہا کہ مذکورہ منی بجٹ بلاجواز ہے جس سے غربت و سمگلنگ میں اضافہ ہوگا پٹرولیم مصنوعات میں ریکارڈ ٹیکسوں کی وصولی کے باوجود منی بجٹ لایا گیاجس سے عوام کنفیوزن اور پریشانی کا شکار ہیں۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت نظر ثانی کرے اور مذکورہ ٹیکسوں کا نفاذ واپس لے۔

مزید :

کامرس -