کانگریس نے امریکی حکومت کو شٹ ڈاؤن سے بچالیا

کانگریس نے امریکی حکومت کو شٹ ڈاؤن سے بچالیا

  

واشنگٹن (اظہر زمان، بیورو چیف) امریکی ایوان نمائندگان نے وفاقی حکومت کو شٹ ڈاؤن سے بچانے کیلئے جمعہ کو کچھ فنڈز فراہم کرنے کا وہ بل منظور کرلیا جسے ایک روز قبل سینیٹ بھی منظور کرچکی تھی۔ رواں مالی سال یکم اکتوبر 2015ء سے شروع ہوا ہے جو 30 ستمبر 2016ء کو ختم ہوگا جس کے وفاقی اخراجات کے ساڑھے گیارہ کھرب ڈالر پر مکمل تصفیہ ہونا باقی ہے۔ تاہم فنڈز کی یہ عارضی فراہمی بدھ کے روز تک یعنی پانچ دن کیلئے کافی ہوگا جس کے بعد پھر بحرانی کیفیت پیدا ہو جائے گی تاہم ڈیمو کریٹک پارٹی سے تعلق رکھنے والے کانگریس کی رولز کمیٹی کے ایک رکن جیرڈ پولس نے یقین ظاہر کیا ہے کہ بار بار مہلت دینے کی بجائے ان پانچ دنوں میں مستقل تصفیہ ہو جائے گا۔ قانون سازوں نے یکم اکتوبر کو شروع ہونے والے مالی سال کے اخراجات کے حوالے سے تصفیے کیلئے ستمبر کے مہینے میں گیارہ دسمبر تک کی مہلت دی تھی لیکن اس مدت میں کوئی اتفاق رائے نہیں ہوسکا۔ وائٹ ہاؤس نے اخراجات کا جو بل پیش کیا ہے اس پر ری پبلکن ارکان کے اعتراضات کے باعث ڈیڈ لاک پیدا ہوا ہے۔ ری پبلکن ارکان سمجھتے ہیں کہ صنعتی کارخانوں کے کاربن اخراج کو کم کرنے، فنانشنل سروسز انڈسٹری کے ضابطوں کو آسان بنانے کے قوانین کو بجٹ تجاویز کے ساتھ شامل کرنا مناسب نہیں ہے۔ اسی طرح اور بھی بہت سے ضوابط کو بجٹ کا حصہ بنایا گیا ہے جو ان کے خیال کے مطابق غیر متعلق ہے۔ اگلے ہفتے بجٹ بل کی حتمی منظوری کے بارے میں فیصلہ کرنے کے بعد کانگریس طویل رخصت پر چلی جائے گی اور پھر جنوری میں واپس آئے گا۔ اس لیے اگلا ہفتہ قانون سازی کیلئے بہت اہم ہے۔

مزید :

صفحہ اول -