اسرائیلی عدالت نے فلسطینی خاندان کو زندہ جلانے میں ملوث ایک صہیونی مجرم کو رہاکردیا

اسرائیلی عدالت نے فلسطینی خاندان کو زندہ جلانے میں ملوث ایک صہیونی مجرم کو ...

  

مقبوضہ بیت المقدس (این این آئی) اسرائیلی ماتحت عدالت نے 5ماہ قبل فلسطین کے مقبوضہ مغربی کنارے کے شمالی شہر نابلس میں فلسطینی خاندان کو زندہ جلائے جانے میں ملوث یہودی دہشت گرد کو رہا کر دیا ہے۔اسرائیلی عبرانی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق جولائی میں دوما کے مقام پر فلسطینی خاندان کو اس کے گھر میں زندہ جلا دیا گیاتھا جس کے نتیجے میں ڈیڑھ سال کا شیر خوار اور اس کے والدین شہید جبکہ ایک 4سالہ بچہ بری طرح جھلس گیا تھا۔ اسرائیلی پولیس نے فلسطینی خاندان کو زندہ جلائے جانے میں ملوث متعدد انتہاء پسندوں کو گرفتار کیا تھا۔گزشتہ روز اسرائیلی عدالت نے فلسطینی خاندان کو زندہ جلائے جانے میں ملوث ایک مجرم کو جیل سے رہا کرنے کے بعد اسے گھر میں نظر بند کردیا ہے۔ گھر پرنظر بندی کا مقصد یہودی کو فلسطینیوں کے حملوں سے تحفظ دلانا ہے۔اسرائیلی خفیہ ادارے شاباک نے ہفتہ قبل خبر دی تھی کہ دوابشہ خاندان کے وحشیانہ قتل میں ملوث مجرم کو سزا دینے کا فیصلہ ہوچکا ہے تاہم اس حوالے سے مزید تفصیلات جاری نہیں کی گئی تھیں۔اسرائیلی وزیر برائے داخلی سلامتی گیلا اردان نے حال ہی میں کہا تھا کہ دوابشہ خاندان کو زندہ جلائے جانے میں ملوث یہودی آباد کاروں کو سزا دیئے جانے کا امکان بہت کم ہے۔

مزید :

عالمی منظر -